Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / لوگ ضعیف والدین اور معذور بچوں کو دواخانوں میں چھوڑ کر فرار

لوگ ضعیف والدین اور معذور بچوں کو دواخانوں میں چھوڑ کر فرار

انسانوں میں بے حسی ، بے رحمی اور خودغرضی میں اضافہ

حیدرآباد۔ 21 اگست (سیاست نیوز) انسان کتنا بے رحم، بے حس اور خود غرض ہوگیا ہے، اس کا اندازہ اس حقیقت سے ہوتا ہے کہ سرکاری دواخانوں میں جہاں ہجوم زیادہ ہوتا ہے، کچھ لوگ اس کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہوئے اپنے بوڑھے بڑے والدین اور معذور بچوں کو وہاں چھوڑ کر غائب ہورہے ہیں۔ 7 اگست کو ایک چار سالہ لڑکی جو ذہنی معذور ہے، نیلوفر ہاسپٹل کے احاطہ میں پائی گئی۔ اس ہاسپٹل سے تقریباً ہر ہفتہ ایسا ایک واقعہ ہورہا ہے۔ ایم این جے انسٹیٹیوٹ آف اونکولوجی اینڈ ریجنل کینسر سنٹر، گاندھی ہاسپٹل اور عثمانیہ جنرل ہاسپٹل میں بھی اس قسم کے واقعات ہورہے ہیں۔ سرکاری دواخانوں کے حکام کا کہنا ہے کہ ارکان خاندان اپنے بچوں کو چھوڑنے ان مقامات پر پہونچتے ہیں جہاں سی سی ٹی وی کیمروں کی نگرانی نہیں ہے۔ والدین یا بچوں کو جب دواخانہ میں شریک کیا جاتا ہے تو غلط پتے دیئے جاتے ہیں۔ اس طرح ان کا کوئی سراغ نہیں ملتا۔ زیادہ تر ذہنی معذور بچوں کو سرکاری دواخانوں میں چھوڑا جارہا ہے۔ نیلوفر ہاسپٹل میں تقریباً ہر روز ایسا ایک کیس آرہا ہے۔ ہاسپٹل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر سی سریش کمار نے کہا کہ ایسے بچوں کا معائنہ کیا جاتا ہے۔ درکار علاج کیا جاتا ہے۔ پولیس کو اطلاع دی جاتی ہے۔ پولیس ایسے بچوں کو ششو وہار منتقل کرتی ہے۔ بعض واقعات ایسے ہیں کہ لوگ دور دراز مقامات سے اپنے ضعیف والدین کے ساتھ آتے ہیں، ایک دو دن دواخانہ میں ان کے ساتھ رہتے ہیں اور یہ کہہ کر چلے جاتے ہیںکہ وہ ایک دو دن میں واپس آئیں گے لیکن پھر کبھی نہیں آتے۔ بتائے ہوئے پتے پر ربط قائم کرنے کی کوشش ناکام ہونے پر ایسے مریضوں کو ضعیفوں کی دیکھ بھال کے مرکز منتقل کیا جاتا ہے۔ ڈاکٹر این جیہ للیتا سپرنٹنڈنٹ ایم این جے کینسر سنٹر نے یہ بات بتائی۔

TOPPOPULARRECENT