Sunday , August 20 2017
Home / دنیا / لیبیائی فوجی کمانڈر کے ہاتھوں 20 داعش جہادی ہلاک

لیبیائی فوجی کمانڈر کے ہاتھوں 20 داعش جہادی ہلاک

طرابلس ۔ 25 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) لیبیا میں فوج کی اسپیشل فورسز کے ایک کمانڈر کیپٹن محمود الورفلی نے چند روز قبل داعش تنظیم کے کئی ارکان کو گولیاں مار کر موت کے گھاٹ اتار دیا۔ واقعے کی وڈیو دیکھنے والے بہت سے افراد کا کہنا ہے کہ یہ منظر دو برس قبل مصری قِبطیوں کو موت کی نیند سلانے کے منظر سے مشابہت رکھتا ہے۔وڈیو کلپ میں داعش کے 20 ارکان کو ہلاک کرنے کی کارروائی دکھائی گئی جنہیں چار صفوں میں کھڑا کیا گیا تھا۔ تمام افراد نے نارنجی رنگ کے کپڑے پہن رکھے تھے جب کہ ان سب کے چہروں کو کالے کپڑے سے ڈھانپ دیا گیا تھا۔ اس دوران لیبیا کی فوج کے چند اہل کار اپنے کمانڈر الورفلی کے ساتھ نمودار ہوئے۔ الورفلی نے ان فوجیوں کو حکم دیا کہ وہ داعشی شدت پسندوں کو گولیاں مار کر موت کی نیند سلا دیں۔الورفلی نے اپنی اس عسکری عدالت کو لگانے کا جواز پیش کرتے ہوئے بتایا کہ “یہ کارروائی ان افراد کے لیبیا کے فوجی اہل کاروں اور عام شہریوں کے قتل ، اغوا ، اذیت رسانی ، دھماکوں سے اڑانے اور ذبح کیے جانے میں ملوث ہونے کے ثبوت ملنے کے بعد کی جا رہی ہے”۔

 

اردن میں اسرائیلی سفارتخانے کے ملازم وطن واپس
یروشلم 25 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) اردن کے دارالخلافہ عمان میں واقع اسرائیلی سفارتخانے کے احاطے میں کل ہوئی فائرنگ میں ملوث ایک سیکورٹی گارڈ سمیت دیگر ملازم آج وطن واپس آ گئے ۔اسرائیل کے وزیر اعظم کے دفتر سے جاری بیان میں یہ اطلاع دی گئی۔واضح ر ہے کہ اتوار کو سفارت خانے کے احاطے میں ہوئی فائرنگ میں اردن کے دو شہریوں کی موت ہو گئی تھی اور ایک زخمی ہو گیا تھا۔فائرنگ میں معمولی طور پر زخمی ہونے والے گارڈسے اردن کے سیکورٹی اہلکار پوچھ گچھ کرنا چاہتے تھے لیکن اسرائیل نے کہا تھا کہ گارڈ کے پاس سفارتی استثنی کا حق ہے اور اس کووطن بھیجا جانا جانا چاہیے ۔

TOPPOPULARRECENT