Tuesday , August 22 2017
Home / دنیا / مالدیپ میں ایمرجنسی برخاست، امریکہ کا خیرمقدم، پراسکیوٹر جنرل برطرف

مالدیپ میں ایمرجنسی برخاست، امریکہ کا خیرمقدم، پراسکیوٹر جنرل برطرف

واشنگٹن 11 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکہ نے مالدیپ میں ایمرجنسی کی برخاستگی کا خیرمقدم کیا ہے۔ یاد رہے کہ صرف ایک ہفتہ قبل ہی ملک کی سلامتی کو لاحق خطرہ کے پیش نظر ملک میں ہنگامی حالات کا نفاذ کیا گیا تھا۔ دریں اثناء اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے نائب ترجمان مارک ٹونر نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ امریکہ مالدیپ میں ایمرجنسی کی برخاستگی کا خیرمقدم کرتا ہے جبکہ اس کے نفاذ کے بعد امریکہ نے تشویش ظاہر کی تھی کہ مالدیپ میں انسداد دہشت گردی کے لئے منظور کئے گئے قوانین اور بعدازاں ایمرجنسی کے نفاذ سے انسانی حقوق اور بنیادی آزادی محدود ہوکر رہ جائیں گے۔ حالانکہ ایمرجنسی کے نفاذ کا اعلان صرف 30 دنوں کے لئے کیا گیا تھا تاہم اسے صرف ایک ہفتہ بعد ہی برخاست کردیا گیا۔ مالدیپ کی وزارت خارجہ سے جاری ایک بیان میں یہ بات کہی گئی جس کی وجہ یہ بتائی گئی کہ ملک میں سکیوریٹی کی مجموعی صورتحال میں بہتری پیدا ہوئی ہے کیوں کہ سکیورٹی فورسیس نے خاطیوں کے خلاف مؤثر کارروائی کی ہے۔ ایمرجنسی کے برخاست ہونے کے بعد تمام بنیادی حقوق بحال کردیئے گئے ہیں  جبکہ دوسری طرف مالدیپ کی پارلیمنٹ نے بین الاقوامی دباؤ کے بعد ایمرجنسی کی برخاستگی کے فوری بعد چیف پراسکیوٹر کو برطرف کردیا۔ نصف شب کو پارلیمنٹ کے عجلت میں طلب کئے گئے اجلاس میں حکمراں پارٹی کے لیجسلیٹرس نے پرسکیوٹر جنرل ممتاز محسن کو بغیر الزام بتائے برطرف کرنے کے حق میں ووٹ دیا۔ جبکہ مالدیپ کی کلیدی اپوزیشن مالدیوین ڈیموکریٹک پارٹی نے ووٹنگ کا یہ کہہ کر بائیکاٹ کیا ہے یہ کارروائی انتہائی عجلت میں انجام دی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT