Monday , August 21 2017
Home / دنیا / مالدیپ میں ایمرجنسی کے نفاذ سے امریکہ کو تشویش

مالدیپ میں ایمرجنسی کے نفاذ سے امریکہ کو تشویش

واشنگٹن 5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مالدیپ میں ایمرجنسی کے نفاذ کے اعلان نے امریکہ کو تشویش میں مبتلا کردیا ہے اور اس نے جزیری ملک سے خواہش کی ہے کہ وہ فوری اثر کے ساتھ تمام آئینی آزادیوں اور اختیارات کو بحال کرے اور سیاسی مفاد کو مدنظر رکھے جانے والے مقدمات اور گرفتاریوں کا خاتمہ کرے۔ اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ ترجمان جان کربی نے بتایا کہ امریکہ نے حکومت مالدیپ سے خواہش کی ہے کہ وہ ایمرجنسی کے نفاذ کو کالعدم قرار دیتے ہوئے آئینی اختیارات اور آزادی کو بحال کرے۔ دوسری طرف سیاسی نوعیت کے تمام مقدمات اور گرفتاریوں کو بھی کالعدم قرار دیا جائے جن میں سابق صدر محمد نشید کے خلاف معاملہ بھی شامل  ہے۔ اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ سے جاری ایک بیان میں کہا گیا آزادیٔ اظہار خیال کا نہ صرف احترام کیا جائے بلکہ اس کا تحفظ بھی حکومت کی ذمہ داری ہے۔ حکومت کو سیول سوسائٹی کے اہم رول کو فراموش نہیں کرنا چاہئے کیوں کہ جمہوریت کا یہی ستون ہے۔ مسٹر کربی نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہاکہ امریکہ مالدیپ کے داخلی حالات سے فکرمند ہے۔ خصوصی طور پر ایمرجنسی کے اعلان اور اس کے نفاذ نے امریکہ کو تشویش میں مبتلا کردیا ہے کیوں کہ اس طرح انسانی آزادی اور حقوق کا استحصال کیا جارہا ہے جو ہر انسان کا بنیادی حق ہے۔ ایمرجنسی کے نفاذ کے ذریعہ عوام کی خانگی زندگی میں دخل اندازی اور اُن کی جبری گرفتاری ناقابل قبول ہے۔

TOPPOPULARRECENT