Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / مبارک ساعت پر ڈیلیوری کے لیے اصرار

مبارک ساعت پر ڈیلیوری کے لیے اصرار

توہم پرستی کی وجہ سے آپریشن سے زچگی کا رجحان
حیدرآباد ۔ 14 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز) : اسے پرائیوٹ دواخانوں کا غیر اخلاقی برتاؤ کہیں گے یا پیدائش کی مبارک تاریخوں کے لیے توہم پرستی یا نفسیاتی خوف کہیں گے کہ درد کے بغیر زچگی اور آپریشن کے ذریعہ ڈیلیوری کا رجحان دونوں تلگو ریاستوں میں کافی بڑھ گیا ہے ۔ تلنگانہ سرفہرست ہے جہاں 58 فیصد زچگیاں آپریشن کے ذریعہ ہوئی ہیں ۔ آندھرا پردیش میں یہ شرح 40 اعشاریہ ایک فیصد ہے ۔ ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہ ڈاکٹرس اور ہاسپٹلس آپریشن سے زچگی کے لیے حاملہ خواتین کی حوصلہ افزائی کررہے ہیں ۔ ڈاکٹر شانتا کماری نے کہا کہ اس رجحان کے لیے مریض اور پالیسی ساز ذمہ دار ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اس کے لیے کسی ایک طبقہ کو ذمہ دار قرار نہیں دیا جاسکتا ۔ حقیقت یہ ہے کہ کوئی نہیں چاہتا کہ آپریشن کی شرح میں اضافہ ہو ۔ کوئی بھی خطرہ مول لینا نہیں چاہتا ۔ نارمل ڈیلیوری کے دوران درپیش پیچیدہ مسائل کی صورت میں ہی آپریشن کی ضرورت پڑتی ہے ۔ نجومیوں کے بتائے ہوئے دن تاریخ کو زچگی کرانے کے رجحان کے فروغ کی وجہ سے مقررہ دن اور مقررہ تاریخ کو آپریشن کے ذریعہ زچگیاں ہورہی ہیں ۔ خود حاملہ خاتون اور ان کے شوہر ایسے دن و تاریخ کو ڈیلیوری کے لیے اصرار کرتے ہیں ۔ کہا جاتا ہے کہ نجومی کے بتائے ہوئے دن اور وقت پر زچگی ماں اور بچے کے لیے مبارک ثابت ہوتے ہیں اس قسم کی توہم پرستی سے مسائل پیدا ہورہے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT