Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / مبینہ ’لو وجہاد‘ معاملے کی جانچ این آئی اے کر یگی

مبینہ ’لو وجہاد‘ معاملے کی جانچ این آئی اے کر یگی

نئی دہلی، 16 اگست (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے کیرالا کے مبینہ ’لوو جہاد‘ معاملے کی جانچ قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے ) کو آج سونپ دی، جس کی نگرانی عدالت کے سابق جج آر وی رویندرن گے۔ کیرالا کی 24 سالہ لڑکی اکھیلا عرف ھادیہ نے مذہب تبدیل کرکے مسلم نوجوان شفین جہاں سے شادی کی تھی، جسے کیرالا ہائی کورٹ نے گزشتہ 24 مئی کو منسوخ کر دیا تھا۔ چیف جسٹس جے ایس کیہر کی صدارت والی بنچ نے اس معاملے میں مبینہ ’لوو جہاد‘ کے پہلوؤں اور شفین کے الزامات کی جانچ کا حکم این آئی اے کو دیا ہے۔ بنچ نے اگرچہ واضح کیا کہ وہ اس معاملے میں کوئی بھی فیصلہ این آئی اے کی رپورٹ پر غور کرنے ، کیرالا پولیس کا موقف معلوم کرنے اور اکھیلا (تبدیلی مذہب کے بعد ھادیہ) سے بات کرنے کے بعد ہی کوئی فیصلہ کرے گی۔ سماعت کے دوران این آئی اے نے عدالت میں دعوی کیا کہ ’لوو جہاد‘کے واقعات ہو رہے ہیں۔ ہندو لڑکیوں کا مذہب تبدیل کرنے اور مسلم نوجوانوں سے نکاح کرنے کے معاملے سامنے آرہے ہیں۔
این آئی اے کے اس دعوے کے بعد عدالت نے اسے اس معاملے کی جانچ کا ذمہ سونپ دیا۔ واضح ر ہے کہ اکھیلا اور شفین جہاں نے نکاح کیا تھا، لیکن ہائی کورٹ نے لڑکی کے والد کی درخواست پر سماعت کرتے ہوئے نکاح کو منسوخ کر دیا تھا۔ جس کے خلاف مسلم نوجوان نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا ہے ۔

 

TOPPOPULARRECENT