Friday , September 22 2017
Home / ہندوستان / متنازعہ مسائل پر ہندوتوا تنظیموں کے غیر ذمہ دارانہ بیانات

متنازعہ مسائل پر ہندوتوا تنظیموں کے غیر ذمہ دارانہ بیانات

مودی حکومت کے خلاف بیداری مہم شروع کرنے پوری کے شنکر اچاریہ کا اعلان
لکھنو ۔ 17 ۔ فروری (سیاست ڈاٹ کام) جگناتھ پوری کے شنکر اچاریہ سوامی ادھوک سجانند نے آج یہ الزام عائد کیا ہے کہ دائیں بازو کی تنظیمیں متنازعہ مسائل پر غیرذمہ دارانہ بیانات دے رہی ہیں اور ملک میں ایسے حالات پیدا کئے جارہے ہیں جس کے باعث فسادات بھڑک اٹھے۔  انہوں نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ دائیں بازو کی تنظیمیں جو کہ بظاہر بی جے پی کی تائید کر رہی ہیں لیکن رام مندر اور دیگر متنازعہ مسائل پر  غیر ذمہ دارانہ بیانات جاری کئے جارہے ہیں جس کے باعث ملک میں فرقہ وارانہ کشیدگی کا ماحول قائم ہوسکتا ہے ۔ جگت گرو نے بتایا کہ انہوں نے حال ہی میں وزیراعظم نریندر مودی کو ایک مکتوب روانہ کرتے ہوئے اشتعال انگیز بیانات پر قدغن لگانے کی گزارش کی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ نریندر مودی 3 اہم موضوعات گیتا ، گنگا اور گائے کو فراموش کردیئے ہیں جس کی بنیاد پر وہ برسر اقتدار آئے ہیں اور بتایا اکہ ایک مذہبی پیشوا کی حیثیت سے اپنے حدود میں مرکزی حکومت کے خلاف شعور بیدار کرنے کیلئے ملک گیر دورہ کریں گے۔ ممبئی حملوں کے ملزم ڈیوڈ ہیڈلی کے اس انکشاف پر کہ عشرت جہاں کا ربط ضبط دہشت گردی سے تھا ۔ پوری کے شنکر اچاریہ نے کہا کہ ایک دہشت گرد ملزم کے بیان کو سچائی تسلیم کرلیا گیا جبکہ دیگر حقائق کو  نظر انداز کردیا گیا ۔ جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے جاریہ تنازعہ پر انہوں نے کہا کہ یہ حکومت کا فریضہ ہے کہ ناگالینڈ کی طرح علحدگی پسندوں سے بات چیت کرے لیکن کشمیر کیلئے اب تک ثالث کا فیصلہ نہیں کیا گیا ، جب تک مناسب فورم پر ان کے نقطہ نظر کی سماعت نہیں کی جائے گی ، وہ  جامعات اور دیگر فو رس میں اپنی آواز بلند کرتے رہیں گے۔

TOPPOPULARRECENT