Tuesday , September 26 2017
Home / کھیل کی خبریں / متنازعہ کھلاڑیوں کی واپسی پرپاکستان کرکٹ منقسم

متنازعہ کھلاڑیوں کی واپسی پرپاکستان کرکٹ منقسم

کراچی ۔21 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام )انٹرنیشنل کرکٹ کونسل(آئی سی سی) نے تو سلمان بٹ، محمد آصف اور محمد عامر پر اسپاٹ فکسنگ کے باعث عائد پابندی ہٹانے کا اعلان کردیا ہے لیکن ان تینوں کھلاڑیوں کی پاکستانی ٹیم میں واپسی کے معاملے پر پاکستانی کرکٹ برادری  منقسیم ہو گئی ہے۔ سابق کپتان راشد لطیف اس معاملے پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ میں اسے کسی بھی اقدام کے سخت خلاف ہوں۔  میں ان کی بین الاقوامی کرکٹ میں واپسی کی بالکل بھی حمایت نہیں کروں گا جس کی وجہ بہت ہے اور یہ کہ یہ کسی ایسے کھلاڑی کی جگہ لیں گے جو شاید ان کے جتنا باصلاحیت نہ ہو لیکن اس نے کوئی غیر اخلاقی کام نہیں کیا اور نہ ہی وہ کرپشن میں ملوث رہا۔ لطیف نے کہا کہ یہ صاف ستھری کرکٹ کھیلنے والے کھلاڑی کے ساتھ سب سے بڑی زیادتی ہے۔میں اس صورتحال کو ایسے دیکھتا ہوں کہ جو کھلاڑی کرپشن اور دھوکہ دہی میں ملوث رہا ہو، اس کا دوبارہ پاکستان کیلئے کھیلنے کا موقع دینا غلط ہے۔ ایسا ان کھلاڑیوں کے ساتھ غلط ہے جنہوں نے قانونی تقاضوں کے مطابق کرکٹ کھیلی۔ یاد رہے کہ راشد لطیف 1990 کے دہے  میں پاکستان کرکٹ میں کرپشن اور میچ فکسنگ سے پردہ اٹھانے والے ہیں جس کے بعد تحقیقات کے نتیجہ میں جسٹس ملک قیوم نے سلیم ملک اور عطاالرحمان پر تاحیات پابندی لگانے کے علاوہ عدالتی کارروائی میں تعاون نہ کرنے پر پانچ کھلاڑیوں پر جرمانے بھی کئے تھے۔ ان میں سے دو کھلاڑی وقار یونس اور مشتاق احمد اس وقت پاکستانی ٹیم کے کوچ ہیں۔ تین سال قبل ٹیم چیف سلیکٹرز اور ہیڈ کوچ کی خدمات انجام دینے والے محسن حسن خان بھی عامر‘ آصف اور سلمان بٹ کی پاکستانی ٹیم میں واپسی کے مخالف ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان تینوں کھلاڑیوں نے یقیناً اپنی سزا پوری کر لی ہے لیکن میرے نزدیک اپنے ملک کیلئے کھیلتے ہوئے میچ کو فروخت کرنا یا فکسڈ کرنا بہت بڑا جرم ہے ۔پاکستانی ٹیم کے ایک اور سابق کپتان اور نامور کمنٹیٹر رمیز راجہ بھی ماضی میں ان کھلاڑیوں کی  ٹیم میں واپسی کی مخالفت کر چکے ہیں اور انہوں نے کہا کہ ان کی ٹیم میں واپسی سے ڈریسنگ روم کا ماحول خراب ہو گا۔ راجہ نے کہا کہ موجودہ ٹیم کے کھلاڑیوں سے پوچھا جانا چاہیئے کہ آیا وہ عامر کے ساتھ کھیلنا چاہتے ہیں یا نہیں؟۔کوئی پاکستانی کھلاڑیوں سے پوچھے کہ کیا وہ عامر کی واپسی چاہتے بھی ہیں یا نہیں۔ کئی برسوں کی ثابت قدمی کے بعد، مصباح الحق اور ان کی ٹیم پاکستان کرکٹ اور اس کی ساکھ کو بچانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ تاہم  ٹیم کے ایک اور سابق کپتان اور عظیم بیٹسمین محمد یوسف ان کھلاڑیوں کو ایک موقع دینے کے حق میں ہیں۔ یوسف نے کہا کہ اگر یہ کھلاڑی ڈومیسٹک کرکٹ کھیل کر اچھی کارکردگی دکھاتے ہیں تو ان کی پاکستانی ٹیم میں منتخب کرنے پر غور ہونا چاہیے، میرا خیال کہ مصباح الحق یا اظہر علی کو ان کی واپسی سے کوئی مسئلہ نہیں ہو گا۔ رن مشین کے نام سے مشہور سابق کپتان محمد یوسف نے کہا کہ انہوں نے غلطی کی ہے لیکن انہیں اس کی سزا مل چکی ہے۔ سابق بیٹسمین باسط علی نے بھی محمد یوسف کے موقف کی تائید کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ ڈومیسٹک کرکٹ میں خود کو منوا لیتے ہیں تو ان کی ٹیم میں واپسی  پر غور ہونا چاہیے۔

TOPPOPULARRECENT