Wednesday , September 20 2017
Home / ہندوستان / ’مجھے چیف منسٹر امیدوار بنایاجاتا تو نتائج مختلف ہوتے ‘

’مجھے چیف منسٹر امیدوار بنایاجاتا تو نتائج مختلف ہوتے ‘

حقیقی بہاری بابو کو دانستہ نظرانداز کرنے سے سب ناراض ، شکست کے ذمہ دار قائدین کو سبق سکھایا جائے : شترو
نئی دہلی ۔9 نومبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) بی جے پی کے ناراض رکن پارلیمنٹ شتروگھن سنہا نے آج دعویٰ کیا کہ اگر پارٹی اُنھیں چیف منسٹر اُمیدوار کے طورپر پیش کرتی تو بہار انتخابی نتائج مختلف ہوتے ۔ شتروگھن سنہا نے کہاکہ وہ اپنی تعریف نہیں کررہے ہیں لیکن اُن کا احساس ہے کہ جب بہار عوام کا لاڈلہ ، دھرتی پتر (اُسی سرزمین کا سپوت) اور حقیقی ’’بہاری بابو‘‘ کو دانستہ طورپر نظرانداز کیا گیا تو پھر یقینا اُن کے حامیوں اور مداحوں پر اثر پڑے گا ۔ وہ نہیں بتاسکتے کہ اگر انھیں چیف منسٹر امیدوار بنایاجاتا تو کس قدر اثر پڑتا اور نتائج کیا ہوتے ؟ لیکن پورے وثوق کے ساتھ یہ کہہ سکتے ہیں کہ کچھ نہ کچھ فرق ضرور پڑتا۔ ہم نے جتنی نشستوں پر کامیابی حاصل کی اس سے زیادہ جیت پاتے ۔ شتروگھن سنہا نے انڈیا ٹی وی کے پروگرام آج کی بات میں رجت شرما کے روبرو یہ انکشاف کیا ۔ جب اُن سے پوچھا گیا کہ کیا وہ مرکز میں وزیر نہ بنائے جانے کی بناء ناراض ہیں؟ شتروگھن سنہا نے کہاکہ یہ سب فرضی باتیں ہیں جو مفادات حاصلہ نے گھڑلی ہیں۔ چند افراد نے بہت زیادہ عہدے حاصل کرلئے اور اب انھوں نے یہ کہنا شروع کردیا کہ میں اس لئے ناراض ہوں کیونکہ مجھے وزیر نہیں بنایا گیا ۔ شتروگھن سنہا نے کہا کہ اگر آپ وزیر بن جائیں تو آپ کو سرخاب کے پر نہیں لگ جاتے ، لیکن یہ بات بھی ضرور ہے کہ جب مجھے وزیر نہیں بنایا گیا تو میرے مداحوں ، حامیوں ، رشتہ داروں ، دوست اور میرے رائے دہندوں نے یہ سوچنا شروع کردیا کہ مجھے وزیر کیوں نہیں بنایا گیا ؟  میرا گناہ کیا ہے؟ کیا بحیثیت وزیر صحت میری کارکردگی بہتر نہیں تھی یا بحیثیت وزیر جہاز رانی میں نے اچھا مظاہرہ نہیں کیا ؟ ۔ انھیں پتہ ہے کہ وہ خود کو یہ کہہ کر تسلی دے سکتے ہیں کہ کسی وزیر کا انتخاب وزیراعظم کا اختیاری معاملہ ہے لیکن وہ اُن کی فراست کو چیلنج نہیں کررہے ہیں لیکن اس کے ساتھ ساتھ میں اُن تمام کو یہ تسلی دیتا ہوں کہ آج نہیں تو کل ضرور وزیر بنوں گا۔  اداکار سے سیاستداں بننے والے شتروگھن سنہا نے اسمبلی انتخابات کی مہم کے دوران بھی پارٹی پر تنقیدیں کی تھیں اور کہا تھا کہ وہ اسمبلی انتخابات کی مہم سے اپنی مرضی سے دور نہیں ہیں ۔ شتروگھن سنہا نے جنتادل یو کے لیڈر نتیش کمار سے آج ملاقات کی اور انہیں عظیم اتحاد کی کامیابی پر مبارکباد پیش کی ۔ نتیش کمار کی زبردست ستائش کرتے ہوئے شتروگھن سنہا نے کہا کہ نتیش کمار ایک آزمودہ ‘ تجربہ کار اور کامیاب چیف منسٹر ہیں۔ سنہا نے بعد ازاں آر جے ڈی کے سربراہ لالو پرساد یادو سے بھی ملاقات کی اور انہیں مبارکباد پیش کی ۔لالو پرساد یادو سے ملاقات کے بعد شتروگھن سنہا نے انہیں اپنا خاندانی دوست قرار دیا اور کہا کہ لالو پرساد بہار اسمبلی انتخابات میںجادوگر کے طور پر ابھرے ہیں اور وہ ایک قومی شخصیت بن گئے ہیں۔ شتروگھن سنہا نے کہا کہ وہ مسٹر نتیش کمار کو سابق چیف منسٹر مغربی بنگال آنجہانی جیوتی باسو کے بعد ایک سب سے بہت بہترین اور قابل احترام لیڈر سمجھتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ آج کی نتیش کمار سے ان کی ملاقات کو صحتمندانہ جذبہ سے دیکھنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ ( پارٹی شکست کیلئے ) ذمہ دار ہیں ان کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے ۔ ان سے جواب طلب کیا جانا چاہئے اور انہیں سبق سکھانے کی ضرورت ہے ۔

TOPPOPULARRECENT