Thursday , August 17 2017
Home / شہر کی خبریں / محمد علی شبیر کو دھمکی آمیز فون کال کا ٹی آر ایس سے لاتعلق: کے ٹی آر

محمد علی شبیر کو دھمکی آمیز فون کال کا ٹی آر ایس سے لاتعلق: کے ٹی آر

بزدلانہ دھمکیوں سے خوفزدہ نہیں ہوں : محمد علی شبیر کا ردعمل

حیدرآباد۔/12ڈسمبر، ( سیاست نیوز) وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ نے قانون ساز کونسل میں قائد اپوزیشن محمد علی شبیر کو دھمکی آمیز فون کال سے ٹی آر ایس کی لاتعلقی کا اظہار کیا اور کہا کہ پارٹی کے کسی کارکن کی جانب سے اس طرح کی حرکت ہرگز نہیں کی جاسکتی۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کے ٹی آر نے کہا کہ شبیر علی جیسے قائد کو دھمکی دینا کیا ٹی آر ایس کیلئے ممکن ہے؟۔ انہوں نے کہا کہ محمد علی شبیر کو دھمکی آمیز فون کال وصول ہونے کی اطلاع پر وہ افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔ حکومت خاطیوں کے خلاف سخت کارروائی کرے گی۔ کے ٹی آر نے کہا کہ ٹی آر ایس کے کسی کارکن کی جانب سے اس طرح کے دھمکی آمیز کال کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت کے مزید تین سال 6ماہ باقی ہیں اور اسوقت تک اپوزیشن کو صرف تنقیدوں پر اکتفاء کرنا پڑیگا جبکہ عوام حکومت کی کارکردگی سے مطمئن ہیں۔ اسی دوران محمد علی شبیر نے دھمکی آمیز کال کی شکایت کے باوجود حکومت اور پولیس کی سرد مہری پر افسوس کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ پولیس میں شکایت درج کئے جانے کے باوجود آج تک کسی اعلیٰ عہدیدار نے ان سے ملاقات نہیں کی اور نہ ہی معلومات حاصل کی۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ ٹی آر ایس حکومت اپوزیشن قائدین کو کس طرح نظرانداز کررہی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ قائد اپوزیشن کو دھمکی آمیز کال پر حکومت کی سردمہری کے سی آر حکومت کی تانا شاہی کو ثابت کرتی ہے۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ وہ اس طرح کی دھمکیوں سے خوفزدہ نہیں ہوں گے، بحیثیت مسلمان ان کا عقیدہ ہے کہ موت کا وقت معین ہے اور کوئی بھی طاقت اس سے قبل نقصان نہیں پہنچا سکتی۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی کا نصب العین عوامی خدمت ہے اور وہ عوامی خدمت کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔ اس طرح کی دھمکیاں انہیں حکومت کی بے قاعدگیوں اور بدعنوانیوں کو بے نقاب کرنے سے روک نہیں سکتیں۔

TOPPOPULARRECENT