Sunday , September 24 2017
Home / ہندوستان / مذاکرات کی بحالی میں ہندو پاک نے پختہ کاری کا مظاہرہ کیا

مذاکرات کی بحالی میں ہندو پاک نے پختہ کاری کا مظاہرہ کیا

جموں و کشمیر کے عوام کو علاقہ میں امن و استحکام کی توقعات ‘ مفتی سعید کا خطاب
سرینگر۔20ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) جموںو کشمیر کے چیف منسٹر مفتی محمد سعید نے ہند۔پاک مذاکرات کی بحالی کی ستائش کرتے ہوئے دوپڑوسی ممالک کے مابین حکمت عملی کی طویل مدتی ساجھیداری کی ضرورت پر زور دیا ۔ مفتی سعید نے ہندوستان اور پاکستان کے درمیان باہمی جامع مذاکرات کی بحالی میں پیشرفت کا خیرمقدم کیا اور اُمید ظاہر کی کہ دو ممالک مصالحتی عمل پر پیشرفت کی راہ ہموار کریں گے ۔ مفتی سعید نے پیڈی پی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ مذاکرات کی بحالی ایک کلیدی پیشقدمی ہے ۔ اسلام آباد کے تئیں نئی دہلی کی پالیسی میں نمایاں تبدیلی رونما ہوئی ہے ۔ مذاکرات کے دوبارہ آغاز کیلئے اب دونوں ہی ملک غیر معمولی پختہ کاری کا مظاہرہ کئے ہیں ۔ اس سے جموں و کشمیر کے عوام میں امید و توقعات پیدا ہوئی ہیں جو اس علاقہ میں امن و استحکام کی دیرینہ اُمنگ رکھتے ہیں ‘‘ ۔ چیف منسٹر نے اس موقع پر اپنا یہ نعرہ دوہرایا ’’ نہ بندوق سے نہ گولی سے ‘ بات بنے گی بولی سے ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ دو پڑوسی ملکوں کے درمیان دوستانہ اور پُرامن تعلقات کے راست استفادہ کنندگان جموں و کشمیر کے عوام ہی ہوں گے ۔ مفتی سعید نے مزید کہا کہ ’’ میں ہمیشہ یہی کہتا ہوں کہ مذاکرات ایک ابتدائی عمل ہے جس کے بہ یک روز نتائج برآمد نہیں ہوتے‘‘ ۔پی ڈی پی کی صدر راور رکن پارلیمنٹ محبوبہ مفتی نے اس طوفانی اجلاس کی معاون صدارت کی جو چار گھنٹوں تک جاری رہا ۔ یہ اجلاس اس ریاست میں پی ڈی پی ۔ بی جے پی حکومت کی کارکردگی کا جائزہ لینا تھا ۔ مفتی سعید نے کہاکہ انہوں نے پارٹی کو مستحکم بنانے کی حکمت عملی مرتب کرنے کے مقصد سے اپنی پارٹی کے قائدین سے مختلف مسائل پر راست بات چیت کیلئے یہ اجلاس طلب کیا تھا ۔ جموںو کشمیر کے خصوصی موقف  کو حاصل دستوری ضمانت کے بارے میں مفتی سعید نے کہا کہ پی ڈی پی ۔ بی جے پی اتحاد کے ایجنڈہ نے بھی ریاست کے اس موقف کو تسلیم کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT