Saturday , September 23 2017
Home / Top Stories / مذاکرات کے احیاء کیلئے مودی کو ہٹانا ہوگا

مذاکرات کے احیاء کیلئے مودی کو ہٹانا ہوگا

پاکستان مزید چار سال انتظار کرے ، منی شنکر ایئر کے ریمارک پر تنازعہ
نئی دہلی ۔ /17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) سابق مرکزی وزیر اور کانگریس لیڈر منی شنکر ایئر نے آج یہ کہتے ہوئے تنازعہ کھڑا کردیا کہ اگر ہندوستان اور پاکستان کے مابین بات چیت کا احیاء نہ ہو تو وزیراعظم نریندر مودی کو ہٹادینا چاہئیے ۔ پاکستانی نیوز چیانل پر پیانل مباحثے کے دوران انہوں نے یہ بات کہی ۔ کانگریس لیڈر کے اس تبصرہ پر بی جے پی اور آر جے ڈی نے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے ۔ بی جے پی نے کہا کہ صدر کانگریس سونیا گاندھی اور نائب صدر راہول گاندھی کو اس بارے میں ردعمل ظاہر کرنا چاہئیے اور ملک کو یہ معلوم ہو کہ اس مسئلہ پر ان کا موقف کیا ہے ۔ کانگریس نے تاہم بی جے پی کے الزامات کو انتہائی بے بنیاد قرار دیا ہے اور کہا کہ منی شنکر ایئر نے پارٹی کو بتایا کہ انہوں نے ایسی کوئی بات نہیں کی ہے ۔ دنیا ٹی وی کے اینکر نے جب یہ سوال کیا کہ ہندوستان اور پاکستان کے مابین باہمی روابط کے تعلق سے تعطل ختم کرنے کیلئے کیا کرنا چاہئیے ؟ منی شنکر ایئر نے جواب دیا پہلا اور سب سے اہم کام مودی کو ہٹانا ہوگا ۔ اس کے بعد ہی بات چیت آگے بڑھ سکتی ہے۔ ہمیں اس کے لئے چار سال انتظار کرنا پڑے گا ۔اس پیانل میں شامل شرکاء کو توقع ہے کہ مودی صاحب اقتدار پر ہوں تو بھی ہم پیشرفت کرسکتے ہیں لیکن وہ سمجھتے ہے کہ ایسا نہیں ہوگا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ کانگریس کو اقتدار پر واپس لائیے اور انہیں ہٹائیے ۔ باہمی تعلقات کی بہتری کیلئے اس کے لئے کوئی راستہ نہیں ہے ۔ ہم انہیں ہٹائیں گے لیکن تب تک آپ (پاکستان) کو انتظار کرنا ہوگا ۔ بی جے پی نے اس تبصرہ کو انتہائی سنگین اور تشویشناک قرار دیا ۔ کانگریس لیڈر ٹام وڈکن نے تاہم کہا کہ ان کے پاس منی شنکر ایئر کا مکتوب ہے جس میں انہوں نے ایسی کوئی بات کہنے سے انکار کیا ہے ۔ منی شنکر ایئر نے کہا کہ مودی پر ان کے ریمارکس کے تعلق سے معذرت کی کوئی وجہ نہیں ۔ انہوں نے سیدھے سوال کا سیدھا جواب دیا ، اس پر انہیں کوئی افسوس نہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان میں یہ پیانل مباحثہ /6 نومبر کو ریکارڈ کیا گیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT