Sunday , October 22 2017
Home / ہندوستان / مذہب کی بنیاد پر تحفظات قومی مفاد میں نہیں نائیڈو

مذہب کی بنیاد پر تحفظات قومی مفاد میں نہیں نائیڈو

بھوپال، 17 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) شہری ترقی کے مرکزی وزیر وینکیا نائیڈو نے آج کہا کہ مذہب کی بنیاد پر تحفظات نہیں ہونا چاہئے ۔انہوں نے کہا کہ دستور کے معماروں کا یہی موقف تھا کہ تحفظات مذہب کی بنیاد پر نہیں ہونا چاہئے ۔ اسے ذات کی بنیاد پر کیا جا سکتا ہے ، لیکن تحفظات اگر مذہب کی بنیاد پر ہونگے تو وہ ملک کے مفاد میں نہیں ہو گا۔ بھوپال میں مسٹر نائیڈو نے نامہ نگاروں سے بات میں کہا کہ آئین نافذ ہونے کے بعد کچھ ریاستی حکومتوں نے مذہب کی بنیاد پر تحفظات دینے کی کوشش کی تھی ، مگر عدالت نے انہیں اس بات کی اجازت نہیں دی ۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی نے ہمیشہ سے مذہب کی بنیاد پر تحفظات کی مخالفت کی ہے ، یہ مسئلہ قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے ) میں شامل چندرا بابو نائیڈو نے بھی اٹھایا تھا، اس وقت بھی اس کی مخالفت کی گئی تھی۔مسٹر نائیڈو نے کہا کہ منڈل کمیشن کے مطابق مسلم معاشرے میں بھی کچھ پسماندہ طبقات ہیں اور بی جے پی ان کے تحفظات کے حق میں ہے ، کسی بھی مذہب کے پسماندہ طبقوں کو تحفظات دینے کی پارٹی حمایت کرے گی، لیکن مذہب کی بنیاد پر تحفظات کا نہیں۔بھونیشور میں کل اختتام پذیر پارٹی قومی مجلس عاملہ اجلاس کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بی جے پی نے طئے کیا کہ آنے والے وقت میں پارٹی کو سب کے دلوں میں جگہ بنانی ہے اور پارٹی کو دیگر ریاستوں اور خاص طور سے جنوبی ریاستوں میں وسعت دینا ہے ۔ نائیڈو نے کہا کہ وزیر اعظم مودی نے لوگوں کے دلوں میں جگہ بنانی لی ہے ، لیکن اب بی جے پی کو لوگوں کو پارٹی سے جوڑنا ہے ۔ تلنگانہ کے رکن اسمبلی راجہ سنگھ کے ایک متنازعہ بیان پر نائیڈو نے کہا کہ ایک شخص کا موقف پارٹی کا موقف نہیں ہو سکتا۔

TOPPOPULARRECENT