Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / مردم شماری رپورٹ میں قادیانیوں کا مسلم فرقہ شمار

مردم شماری رپورٹ میں قادیانیوں کا مسلم فرقہ شمار

مسلمانوں کے جذبات شدید مجروح : مجلس تحفظ ختم نبوت
حیدرآباد ۔ 6 اگست (پریس نوٹ) مولانا انصاراللہ قاسمی آرگنائزر مجلس تحفظ ختم نبوت کے بموجب مجلس تحفظ ختم نبوت ٹرسٹ تلنگانہ و آندھراپردیش کے ارکان مولانا شاہ جمال الرحمن مفتاحی، مولانا مفتی عبدالمغنی مظاہری، مولانا خالد سیف اللہ رحمانی، مولانا محمد عبدالقوی، مولانا مفتی غیاث الدین رحمانی قاسمی، مولانا خواجہ نذیرالدین سبیلی، مولانا مصلح الدین قاسمی، مولانا محمد امجد علی قاسمی اور مولانا محمد ارشد علی قاسمی نے مسلمانوں میں مسلکی بنیادوں پر 2011ء میں حکومت کی طرف سے کروائی گئی مردم شماری میں قادیانیوں کو ’’مسلم فرقہ‘‘ شمار کرنے پر اپنی شدید برہمی کا اظہار کیا۔ علماء کرام نے کہا خود ’’احمدیہ مسلم جماعت‘‘ کہنے والا قادیانی فرقہ اسلام کے خلاف اپنے مذہبی نظریات اور عقائد کی وجہ سے مسلمان سے علحدہ شدہ ایک الگ فرقہ ہے جس کا مذہب اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس لئے اس فرقہ کو مسلمان شمار یا مسلمانوں میں شامل نہیں کیا جاسکتا۔ اسلام اور مسلمانوں کے بارے میں قادیانی فرقہ کے باغیانہ نظریات کی بناء پر تمام مسلم جماعتوں کے علماء و مفتیان اور مسلم اسکالرس نے اس کو شروع دن سے ہی اسلام سے خارج اور مسلمانوں سے الگ فرقہ ہونے کا فتویٰ دیا۔ اس فتویٰ کو عدالتوں میں بھی قبول کیا گیا۔ چنانچہ ملک کی آزادی سے پہلے 1935ء میں بھاولپور کی عدالت نے قادیانی فرقہ کے مسلمان ہونے کے دعویٰ کو مسترد کردیا۔ اس کو غیرمسلم قرار دیتے ہوئے مسلمان لڑکی کے ساتھ قادیانی لڑکے کے نکاح کو فسخ کردیا۔ اس کے علاوہ 1974ء میں تمام مسلم ملکوں کی نمائندہ تنظیم ’’ورلڈ مسلم لیگ‘‘ نے مقدس شہر مکہ مکرمہ میں منعقدہ انٹرنیشنل کانفرنس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیاکہ قادیانی فرقہ مسلمان نہیںہے۔ مسلمانوں سے علحدہ ایک الگ فرقہ ہے۔ قادیانی فرقہ کے بارے میں ان سارے حقائق کو نظرانداز کرتے ہوئے موجودہ حکومت نے اس کو ’’مسلم فرقہ‘‘ شمار کیا ہے۔ حکومت کی اس حرکت سے ملک کی دوسری بڑی اکثریت مسلمانوں کے مذہبی جذبات شدید مجروح ہوگئے ہیں۔ اپنے اس دل آزار اقدام کے ذریعہ حکومت آزادی وطن مخالف گروہ قادیانی فرقہ کو مسلمانوں کے خلاف بڑھاوا دے رہی ہے۔ وہ مسلمانوں کے خلاف انتشار پسند اور اشتعال انگیز طاقتوں کا حوصلہ بڑھا رہی ہے۔ ہم اس کی شدید مذمت کرتے ہیں اور حکومت سے پرزور مطالبہ کرتے ہیں کہ مسلمانوں سے متعلق مردم شماری کی رپورٹ صحیح کرتے ہوئے قادیانی فرقہ کو مسلمانوں سے الگ کرے۔

TOPPOPULARRECENT