Wednesday , August 23 2017
Home / کھیل کی خبریں / مردوںکے فٹبال مقابلوں میں پہلی مرتبہ خاتون ریفری

مردوںکے فٹبال مقابلوں میں پہلی مرتبہ خاتون ریفری

برلن۔24 مئی (سیاست ڈاٹ کام) جرمن فٹ بال لیگ میں پہلی مرتبہ کسی خاتون کو بطور میچ ریفری خدمات انجام دینے کے اجازت مل گئی ہے۔ یورپ میں مردوں کے فٹ بال کے اہم مقابلوں میں ابھی تک کسی خاتون کو ریفری بننے کا اعزاز حاصل نہیں ہوا۔ جرمن فٹ بال فیڈریشن کے کے بموجب  38  سالہ پولیس عہدیدار بیبیانا شٹائن ہاؤس‘  بنڈس لیگا کے اگلے ایڈیشن میں بطور ریفری میدان میں اتریں گی۔یورپ میں پہلی مرتبہ کسی اہم لیگ میں کسی خاتون کو یہ ذمہ داری سونپنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔بیبیانا شٹائن ہاؤس1999  سے جرمن فٹ بال فیڈریشن کے لئے ریفری کی خدمات سر انجام دے رہی ہیں جبکہ وہ 2007  سے اب تک سیکنڈ ڈویژن کے 80 میچوں میں یہی فرائض انجام دے چکی ہیں۔ مردوں کے اہم مقابلوں میں کسی خاتون کو ریفری کے طور پر خدمات انجام دینے کی یہ اجازت ایک اہم پیشرفت قرار دی جا رہی ہے۔جرمنی میں بیبیانا شٹائن ہاؤس کو مردوں کے میچوں میں ریفری بنانے کا فیصلہ جرمن فٹ بال فیڈریشن نے کیا ہے۔ وہ 2011  کے خواتین کے ورلڈکپ، 2012  کے لندن اولمپکس فائنل اور کئی دیگر اہم میچوں میں بھی ریفری کے فرائض انجام دی چکی ہیں لیکن یہ تمام ایونٹس کے مقابلے خواتین کے تھے ۔شٹائن ہاؤس نے اس ترقی پر اپنی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا،کوئی بھی ریفری ہو، چاہے وہ عورت ہو یا مرد، بنڈس لیگا میں ریفری کے طور پر خدمات انجام دینا اس کا مقصد ہوتا ہے۔ بنڈس لیگا یا جرمنی کی وفاقی فٹ بال لیگ جرمنی میں فٹ بال کا سب سے اہم اور بڑا ٹورنمنٹ ہے، جس میں ملک بھر کے کلب شرکت کرتے ہیں۔شٹائن ہاؤس کے بقول وہ اس مقصد کی خاطر گزشتہ کئی برسوں سے انتھک محنت کر رہی تھیں اور اس کوشش میں انہیں کچھ ناکامیوں کا سامنا بھی کرنا پڑا، اس لئے وہ اس اعزاز پر اب بہت ہی خوش ہیں۔ انہوں نے جرمن فٹ بال فیڈریشن کا شکریہ ادا کرتے ہوئے مزید کہا کہ وہ اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے توقعات پر پورا اترنے کی کوشش کریں گی۔جرمن فٹ بال فیڈریشن ڈی ایف بی کے صدر رائن ہارڈ گرِنڈل نے امید ظاہر کی ہے کہ مستقبل میں بنڈس لیگا کے میچوں کے لئے مزید خواتین ریفریز کی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ شٹائن ہاؤس دیگر نوجوان لڑکیوں کے لئے ایک مثال ثابت ہوں گی اور انہیں دیکھتے ہوئے دیگر خواتین بھی اس شعبے میں اپنی صلاحیتوں کو لوہا منوانے کی کوشش کریں گی۔

TOPPOPULARRECENT