Saturday , March 25 2017
Home / شہر کی خبریں / مرکزی حکومت سے آرمور ۔ عادل آباد ریلوے لائن کی منظوری

مرکزی حکومت سے آرمور ۔ عادل آباد ریلوے لائن کی منظوری

2800 کروڑ کے خرچ کا تخمینہ ، وزراء اندرا کرن ریڈی اور جوگو رامنا کی جنرل منیجر ایس سی آر سے ملاقات
حیدرآباد ۔ 6 ۔ مارچ : ( سیاست نیوز ) : ریاستی وزراء اندرا کرن ریڈی جوگو رامنا نے ساوتھ سنٹرل ریلوے جنرل منیجر ونود کمار سے ملاقات کرتے ہوئے آرمور ، عادل آباد براہ راست نرمل ریلوے لائن تعمیر کرنے پر تبادلہ خیال کیا ۔ 232 کیلو میٹر ریلوے لائن کی تعمیر پر 2800 کروڑ روپئے خرچ ہونے کا تخمینہ تیار کیا گیا ۔ کافی لمبے عرصے کے بعد آرمور ۔ عادل آباد ریلوے لائن بچھانے کو مرکزی حکومت نے منظوری دے دی ہے ۔ ریاستی اور مرکزی حکومت ایک دوسرے سے تعاون و اشتراک کرتے ہوئے اس پراجکٹ کو مکمل کریں گے اور دونوں حکومتوں کے درمیان بہت جلد معاہدہ پر بھی دستخط کیے جائیں گے ۔ ریاستی وزراء اندرا کرن ریڈی ، جوگورامنا اور ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ نگیش نے آج ساوتھ سنٹرل ریلوے کے جنرل منیجر ونود کمار سے ملاقات کی اور نئی ریلوے بچھانے کے لیے مختلف پہلوؤں کا جائزہ لیا ۔ تلنگانہ کے لیے اہمیت کی حامل تصور کی جانے والی آرمور ۔ عادل آباد ریلوے لائن جس کو حیدرآباد سے بھی مربوط کیا جائے گا ۔ وزراء نے ساوتھ سنٹرل ریلوے کے جنرل منیجر سے ریلوے لائن کی تعمیرات کا جلد از جلد آغاز کرنے پر زور دیا ۔ ریاستی حکومت نے مرکزی حکومت کے ساتھ مشترکہ حکمت عملی تیار کرتے ہوئے پراجکٹ تکمیل کرنے سے اتفاق کیا ہے ۔ ونود کمار نے وزراء کو بتایا کہ ریاستی و مرکزی حکومت کے درمیان معاہدہ طئے پانے کے بعد اندرون تین سال 232 کیلو میٹر ریلوے لائن کو پورا کرنے کا تیقن دیا ۔ ریاستی وزراء اندرا کرن ریڈی جوگورامنا نے اس مسئلہ پر چیف منسٹر کے سی آر سے مذاکرات کرتے ہوئے معاہدہ کو قطعیت دینے کے لیے راہ ہموار کرنے سے اتفاق کیا ۔ واضح رہے کہ مرکزی وزیر ریلوے سریش پربھو نے اس پراجکٹ کو پہلے ہی منظوری دے دی تھی ۔ 2800 کروڑ روپئے کے مصارف سے بچھائی جانے والی ریلوے لائن آرمور ، عادل آباد براہ راست نرمل سے ہوتے ہوئے پڑوسی ریاست مہاراشٹرا کے گڑ چندور تک پہونچے گی ۔ جملہ مصارف میں 50 فیصد مصارف تلنگانہ حکومت برداشت کرے گی ماباقی 50 فیصد مصارف مرکزی حکومت برداشت کرے گی ۔ وزراء اور ساوتھ سنٹرل ریلوے جنرل منیجر کی ملاقات میں ارکان اسمبلی راتھوڑ بابو راؤ ، وٹھل ریڈی بھی موجود تھے ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT