Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / مرکزی حکومت کی جانب سے روشناس کروا ئے گئے گڈس اینڈ سرویس ٹیکس

مرکزی حکومت کی جانب سے روشناس کروا ئے گئے گڈس اینڈ سرویس ٹیکس

جولائی سے نفاذ کے بعد کیا سستا ہوگا اورکیا مہنگا؟
حیدرآباد۔20مئی (سیاست نیوز) مرکزی حکومت کی جانب سے روشناس کروائے گئے گڈس اینڈ سروس ٹیکس کے جولائی سے نفاذ کے بعد کیا سستا ہوگا اور کیا مہنگا؟
٭    دودھ ‘ انڈا‘ مرغ ‘ چھانچ‘ دہی‘ گوشت ‘ مچھلی‘ شہد‘ پھل ‘ ترکاری‘ بیسن‘ بریڈ‘ نمک‘ اسٹامپ‘ جوڈیشل پیپر‘ طبع شدہ کتب‘ اخبار‘ چوڑیاں‘ دستکاری اشیاء کو ٹیکس کے زمرہ سے خارج رکھا گیا ہے۔ ان اشیاء پر جی ایس ٹی عائد نہیں ہوگا۔
٭    دودھ کے پاؤڈر‘ کریم‘ پنیر‘ محفوظ کردہ ترکاریاں‘ مصالحہ جات‘ چائے کی پتی‘ کافی ‘ پیزا بریڈ‘ سابودانا‘ ادویات‘ کیروسین‘ اسٹنٹ کے علاوہ دیگر اشیاء کو 5فیصد جی ایس ٹی کے زمرہ میں رکھا گیا ہے۔
٭    مسکہ‘ گھی‘ خشک میوہ جات‘ ساسیج‘ پھلوں کے مشروبات‘ نمکین‘ آیورویدک ادویات‘ ٹوتھ پاؤڈر‘ اگربتی‘ کلرنگ بکس‘ چھتری‘ سلائی مشین‘ موبائیل فون کو 12فیصد ٹیکس کے زمرہ میں رکھا گیا ہے۔
٭    شکر‘ کارن فلیکس‘ پاستہ‘ کیک‘ پیسٹری‘ جام‘ ساسیس‘ سوپ‘ آئس کریم‘ بوتل بند پانی‘ کیمرہ ‘ اسپیکر‘ تیارغذائی اشیاء‘ اسٹیل سے تیار اشیاء کو 18فیصد کے زمرہ میں رکھا گیا ہے۔
٭    چیونگم‘ چاکلیٹ‘ پان مسالہ ‘ ڈیوڈرینٹ‘ سن اسکرین‘ شیونگ کریم‘ شیمپو‘ قضاب‘ واٹر ہیٹر‘ آٹوموبائیل‘ موٹر سائیکل وغیرہ کو 28فیصد کے زمرہ میں رکھا گیا ہے۔
٭    جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد برانڈیڈ ملبوسات پر 18فیصد ٹیکس عائد کیا جائے گا جس کے سبب تیار ملبوسات مہنگے ہوجائیں گے۔
٭    خوردنی تیل کی قیمت میں ٹیکس کی کمی کے سبب کمی واقع ہوگی۔
٭    صابن پر اب تک 24فیصد تک ٹیکس عائد کیا جا تا تھا لیکن اب جی ایس ٹی میں 5 فیصد کے زمرہ میں صابن شامل کئے جانے کے سبب صابن سستے ہوجائیں گے۔
٭    سر میں لگائے جانے والے تیل پر اب تک 22تا24فیصد ٹیکس عائد کیا جاتا تھا لیکن اب 18فیصد کے زمرہ میں شامل ہونے کے بعد سر میں لگانے کیلئے استعمال کئے جانے والے تیل کی قیمت بھی کم ہوجائے گی۔
٭     چھوٹی کاریں جیسے آلٹو‘ کلیریو‘ بلینو‘ پولو وغیرہ جی ایس ٹی کے بعد مہنگی ہو جائیںگی کیونکہ مجموعی ٹیکس میں 2فیصد تک کا اضافہ ہوگا۔
٭    سیڈان ‘ میڈیم لگژری گاڑیاں جس میں ڈسٹر‘ ایس یو ویز‘ ہونڈا سٹی وغیرہ شامل ہیں ان کی قیمتیں جوں کی توں برقرار رہیںگی کیونکہ ان کاروں پر عائد ہونے والے ٹیکس میں کوئی ترمیم نہیں کی گئی ہے۔
٭     لگژری کاریں جن میں مرسڈیز بینز‘ آڈی‘ جائیگور‘ بی ایم ڈبلیو‘ والوو وغیرہ شامل ہیں ان گاڑیوں کی قیمت میں کمی واقع ہوگی کیونکہ جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد ان پر عائد کئے جانے والے ٹیکس میں 12فیصد تک کی تخفیف ہوگی۔
جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد مختلف خدمات کی فراہمی کے لئے بھی علحدہ علحدہ ٹیکس سلاب عائد کئے گئے ہیں اور بعض خدمات پر جی ایس ٹی کے علاوہ سیس علحدہ عائد کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT