Sunday , October 22 2017
Home / ہندوستان / مرکز کو حج پالیسی پر نظرثانی کیلئے تجاویز مطلوب

مرکز کو حج پالیسی پر نظرثانی کیلئے تجاویز مطلوب

نئی دہلی ۔ 18 مئی (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی حکومت نے اپنی موجودہ حج پالیسی پر نظرثانی کیلئے عوام سے تجاویز طلب کی ہیں کیونکہ سپریم کورٹ نے حکم جاری کیا ہیکہ 2022ء تک سفر حج پر دی جانے والی رعایت بتدریج ختم کردی جائے۔ تجاویز 24 مئی تک بذریعہ ای میل [email protected] پر روانہ کی جاسکتی ہے۔ ایک سینئر عہدیدار نے کہا کہ ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم کی گئی ہے تاکہ نئی حج پالیسی 2018-22 تیار کی جائے۔ علاوہ ازیں عوام کی تجاویز کی بھی سماعت کرے جو 25 مئی تک پیش کی جائیں گی۔ وزارت اقلیتی امور نے سابق کونسل جنرل ہندوستان برائے جدہ افضل امان اللہ کی زیرصدارت یہ کمیٹی قائم کی ہے اور اس کو ذمہ داری دی گئی ہیکہ سپریم کورٹ کے فیصلہ کے مختلف پہلوؤں اور اس کے اطراف کا جائزہ لیں جو موجودہ حج پالیسی کے بارے میں ہے اور موزوں ترمیمات کی سفارش کرے۔ ہندوستان کا کوٹہ برائے سالانہ سفرحج جو مسلمانوں کی جانب سے کیا جاتا ہے 1.70 لاکھ ہے۔ ان میں سے 1.25 لاکھ حج کمیٹی کے ذریعہ اور باقی 45 ہزار خانگی ٹور آپریٹرس کے ذریعہ سفر کرتے ہیں۔ سپریم کورٹ نے اپنے 2012ء کے رکن میں سالانہ 650 کروڑ روپئے کی حج سبسیڈی ختم کرنے اور اسے تعلیمی ترقی کیلئے مختص کرنے کہا تھا۔

TOPPOPULARRECENT