Saturday , August 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / مسلمانوں کو تحفظات کیلئے فوری قانون سازی کا مطالبہ

مسلمانوں کو تحفظات کیلئے فوری قانون سازی کا مطالبہ

گدوال میں منعقدہ مسلم ریزرویشن ریالی سے کمیونسٹ قائد عبدالجبار کا خطاب
گدوال /8 ستمبر ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) مسلمانوں کے معاشی حالات و ہمہ جہتی ترقی کیلئے 12 فیصد تحفظات کے عمل سے متعلق کیا گیا وعدہ 14 ماہ گذرنے کے بعد بھی برفدان کی نذرہے ۔ ٹی آر ایس حکومت کو چاہئے کہ اپنے انتخابی وعدے کو عملی جامہ پہناتے ہوئے مسلمانوں کو ترقیوں کی راہ پر پہونچائیں ۔ 12 فیصد تحفظات کی عمل آوری کیلئے اب دوبارہ کسی انکوائری کمیشن کی قطعی ضرورت نہیں ۔ رنگاناتھ مشرا گوپالا سنگھ اور راجندر سچر کمیٹی کی سفارش پر عمل کرتے ہوئے 12 فیصد تحفظات کیلئے فی الفور قانون ساز کیلئے ٹھوس اقدامات کریں ۔ جناب عبدالجبار گدوال کے آر ڈی او دفتر پر گدوال مسلم ریزرویشن پولاٹا سمیتی کی جانب سے منعقدہ ایک ریالی کو مخاطب کرتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا ۔ جناب عبدالجبار نے کہا کہ 65 سالوں سے سبھی سیاسی جماعتوں نے مسلمانوں کی ترقی کی بات کو سامنے رکھتے ہوئے اقتدار کے مزے لوٹے ۔ ٹھیک اسی طرح مسٹر کے سی آر بھی اس خطوط پر چلتے ہوئے اقتدار کی کرسی پر فائز ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی بجٹ میں اقلیتوں کی ترقی کیلئے آبادی کے تناسب 14 فیصد کے حساب سے بجٹ بھی 14 فیصد مختص کرنا ضروری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کے سی آرنے اقتدار پر آتے ہی 4 ماہ میں 12 فیصد تحفظات دینے کا شادنگر جلسہ میں وعدہ کیا تھا لیکن 14 ماہ گذرنے کے بعد بھی ابھی تک صرف کمیشن کے قیام تک اس مسئلہ کو محدود رکھا گیا ہے ۔صدر کانگریس گدوال جناب عبدالسلام نے ریالی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ریاستی وزیر اعلی جناب کے چندرا شیکھر راؤ انتخابات کے دوران مسلمانوں سے جو وعدہ کیا تھا اس کی عاجلانہ تکمیل کریں ۔ 12 فیصد تحفظات کے وعدہ کو عمل میں لاتے ہوئے تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کی جانب سے تقرر کیا جانے والے جائیدادوں میں 12 فیصد تحفظات عمل میں لائے ۔ انہوں نے کہاکہ آنجہانی وزیر اعلی ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی نے مسلمانوں کو جو 4 فیصد تحفظات فراہم کیا تھا اس کی سنوائی عدالت اعلی میں ہونے والی ہے ۔ ابھی ریاست کی جانب سے وکلاء کا تقرر عمل میں آیا ہے ۔ جلد از جلد اس کام کو بھی انجام دیں بعد ازاں ایک میمورنڈم آر ڈی او گدوال کو پیش کیا گیا ۔ اس موقع پر رکن بلدیہ محمد اسحاق سینئیر قائد ، جناب ایم اے پاشاہ ،رحمت پاشاہ ، معصوم ، اے چاند ، محمد دولت ، لائق بیگ ، جناب عتیق الرحمن ، محمد پاشاہ اور دیگر موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT