Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلمانوں کو تعلیم اور روزگار کے معاملہ میں بھی تحفظات کی فراہمی

مسلمانوں کو تعلیم اور روزگار کے معاملہ میں بھی تحفظات کی فراہمی

تحفظات فراہمی سے چیف منسٹر کی سنجیدگی کا ثبوت ، چیرمین کھادی اینڈ ویلیج بورڈ کا بیان
حیدرآباد۔17اپریل(سیاست نیوز) مسلمانوں کو 12فیصد تحفظات کی فراہمی کے لیے تلنگانہ اسمبلی و قانون سازکونسل میں بل کی منظوری نے ریاست کے مسلمانوں میں پائی جانے والی مایوسی کو ختم کرنے میں کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ مولانا یوسف زاہد صدرنشین تلنگانہ کھادی اینڈ ویلیج بورڈ نے حکومت کے اقدام کی ستائش کرتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکومت نے جو تاریخ ساز کارنامہ انجام دیا ہے اس کے مابقی مراحل کی تکمیل کے بعد جو حالات ہوں گے وہ مسلمانوں کی ترقی میں اہم سنگ میل ثابت ہوں گے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست تلنگانہ میں حکومت نے مسلمانوں کی مایوسی کے خاتمہ کا جو بیڑہ اٹھایا ہے اس میں بڑی حد تک کامیابی حاصل ہونے کی قوی توقع ہے۔ تلنگانہ میں مسلم تحفظات میں اضافہ کے فیصلہ اور بل کی منظوری نے ریاست کی دوسری بڑی اکثریت کے حوصلہ میں اضافہ کا سبب بنی ہے اورامید کی جا رہی ہے کہ اب بہت جلد مسلمانوں کوتعلیم اور ملازمت کے ساتھ ساتھ سیاسی تحفظات بھی حاصل ہونے لگ جائیں گے ۔ مولانا یوسف زاہد نے کہا کہ ریاست کے مسلمانوں کوچیف منسٹر تلنگانہ سے توقعات وابستہ تھیں اور ان توقعات کومسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے پورا کرتے ہوئے مسلمانان تلنگانہ کے دلوں میں جگہ بنا لی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست تلنگانہ میں مسلمانوں کی ترقی کی راہ میں حائل سب سے بڑی رکاوٹ ان میں 60سالوں کے دوران پیداکی گئی مایوسی ہے اور اس مایوسی کے عالم میں مسلمان احساس کمتری کا شکار ہوتے جارہے تھے لیکن مسٹر چندر شیکھر راؤ نے اس صورتحال کو محسوس کرتے ہوئے تلنگانہ تحریک کے دوران اس بات کا وعدہ کیا تھا کہ ریاست تلنگانہ کا حصول تلنگانہ عوام کی عزت نفس کا مسئلہ ہے اور سنہرا تلنگانہ کی تشکیل کو چیف منسٹر نے اپنی نفس کا مسئلہ بنالیا جس کے سبب تلنگانہ میں مسلم تحفظات کے فیصد میں 200فیصد کا اضافہ ممکن ہوا۔ صدر نشین تلنگانہ کھادی اینڈ ویلیج بورڈ نے بتایا کہ ریاست تلنگانہ میں تحفظات پر عمل آوری کے ذریعہ مسلم طبقات کی ترقی کو ممکن بنانے کے اقدامات کا آغاز چیف منسٹر کی سنجیدگی کی علامت ہے۔ ایسا نہیں کہ چیف منسٹر مسلمانوں کی حد تک محدود ہیں بلکہ وہ تلنگانہ تہذیب کے علمبردار ہیں اور تمام طبقات کی ترقی کے متعلق فیصلے کر رہے ہیں۔ مولانا یوسف زاہد نے کہا کہ ریاست میں مسلمانوں کے تحفظات میں کئے گئے اضافہ کے مثبت نتائج برآمد ہوں گے اور ٹی آر ایس کو اقلیتوں میں حاصل مقبولیت میں مزید اضافہ ہوگا۔انہوں نے تحفظات کی تحریک چلانے والی تنظیموں اور اداروں کو بھی مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے عوام سے کئے گئے وعدہ کو پورا کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT