Sunday , September 24 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کیلئے آج ضلعی و سٹی ہیڈکوارٹرس پر احتجاجی دھرنا

مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کیلئے آج ضلعی و سٹی ہیڈکوارٹرس پر احتجاجی دھرنا

اقلیتی قائدین سے شرکت کی اپیل ، صدر تلنگانہ پی سی اقلیت ڈپارٹمنٹ فخر الدین کا بیان
حیدرآباد ۔ 20 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز) : صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ مسٹر محمد خواجہ فخر الدین نے کہا کہ 21 اپریل کو تلنگانہ کے تمام اضلاع اور سٹی ہیڈ کوارٹرس پر 12 فیصد مسلم تحفظات پر عمل آوری کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاجی دھرنا منظم کیا جائے گا ۔ کانگریس کے تمام قائدین بالخصوص اقلیتی قائدین کو احتجاجی دھرنے کو کامیاب بنانے پر زور دیا ہے ۔ مسٹر محمد خواجہ فخر الدین نے کہا کہ صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کیپٹن اتم کمار ریڈی نے 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک میں شدت پیدا کرنے اور 21 اپریل کو سارے تلنگانہ میں احتجاجی دھرنا منظم کرنے پر زور دیا ہے ۔ وہ اس سلسلے میں اضلاع و سٹی کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ کے صدور اور ریاستی قائدین سے مشاورت کرچکے ہیں اور انہیں احتجاجی دھرنوں کو کامیاب بنانے پر زور دے چکے ہیں ۔ ساتھ ہی اضلاع و سٹی کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹس کی جانب سے احتجاجی دھرنے کو کامیاب بنانے کی تیاریاں مکمل ہوچکی ہیں ۔ مسٹر محمد خواجہ فخر الدین نے کہا کہ 2 سال قبل شاد نگر ضلع محبوب نگر میں انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے چیف منسٹر نے ٹی آر ایس کو اقتدار حاصل ہونے کی صورت میں مسلمانوں کو اندرون 4 ماہ 12 فیصد مسلم تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا جس سے متاثر ہو کر تلنگانہ کے مسلمانوں نے ٹی آر ایس کو اقتدار میں لانے میں اہم رول ادا کیا تاہم 24 ماہ گذر جانے کے باوجود چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر نے مسلمانوں سے کیا گیا وعدہ پورا نہیں کیا ہے ۔ جس کی کانگریس پارٹی سخت مذمت کرتی ہے ۔ افسوس کی بات ہے کہ مسلم تحفظات فراہم کرنے کے معاملے میں چیف منسٹر سنجیدہ نہیں ہے ۔

 

بغیر اختیارات کی سدھیر کمیشن تشکیل دیتے ہوئے وقت ضائع کیا جارہا ہے اس کمیشن کو مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کا بھی کوئی اختیار نہیں ہے ۔ ریاستی وزراء اور چیف منسٹر کے ارکان خاندان کویتا ، کے ٹی آر اور ہریش راؤ 12 فیصد مسلم تحفظات پر پابند عہد رہنے کا اعلان کرتے ہوئے تلنگانہ کے مسلمانوں کو دھوکہ دے رہے ہیں ۔ 12 فیصد مسلم تحفظات پر 4 ماہ میں عمل کر کے دیکھانے کا چیلنج کرنے والے چیف منسٹر اسمبلی میں قرار داد منظور کر کے مرکز کو روانہ کرتے ہوئے مسلمانوں کو مایوس کررہے ہیں کیوں کہ مرکز میں بی جے پی کے زیر قیادت این ڈی اے حکومت ہے ۔ بی جے پی مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کے خلاف ہے ۔ انتخابات میں مسلمانوں کو ہتھیلی میں جنت دکھانے والی ٹی آر ایس اقتدار حاصل ہونے کے بعد انہیں فراموش کررہی ہے ۔ بڑے ہی افسوس کی بات ہے کہ ڈپٹی چیف منسٹر مسٹر محمد محمود علی اور ٹی آر ایس کے اقلیتی قائدین وقت ضائع ہونے اور تعلیمی و ملازمتوں میں مسلمان 12 فیصد تحفظات سے محروم ہونے کا تماشہ دیکھ رہے ہیں ۔ ڈپٹی چیف منسٹر کو عہدے سے محروم ہونے اور اقلیتی قائدین کو بورڈ و کارپوریشن کے نامزد عہدوں سے محروم ہونے کا خوف ہے ۔ جس کی وجہ سے وہ مسلمانوں کے ساتھ ہونے والی نا انصافیوں کو نظر انداز کرتے ہوئے صرف اپنے سیاسی مفادات کو ترجیح دے رہے ہیں ۔ کانگریس پارٹی 12 فیصد مسلم تحفظات کے لیے اپنی جدوجہد میں مزید شدت پیدا کرے گی ۔۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT