Friday , September 22 2017
Home / Top Stories / مسلمانوں کی اندھا دھند گرفتاریاں کٹر پسندی کا موجب

مسلمانوں کی اندھا دھند گرفتاریاں کٹر پسندی کا موجب

متوقع سماجی و معاشی فوائد سے محرومی کے سبب مسلم کمیونٹی یکا و تنہا۔ تلنگانہ ڈی جی پی انوراگ شرماکا خطاب
حیدرآباد 22 ڈسمبر (سیاست نیوز) تلنگانہ پولیس کے سربراہ انوراگ شرما نے کہاکہ مسلمانوں میں یکا و تنہا کردیئے جانے کا احساس پایا جاتا ہے کیوں کہ ’’متوقع سماجی اور معاشی فوائد‘‘ اُن تک نہیں پہونچ پارہے ہیں۔ کوئی بھی دہشت گردانہ حملے کے بعد اس کمیونٹی کے نوجوانوں کی اندھا دھند گرفتاریاں اور مسلمانوں کو سماجی و معاشی محاذ پر الگ تھلگ کردینے کے نتیجہ میں اقلیتوں میں کٹر پسندی پیدا ہورہی ہے۔ ڈائرکٹر جنرلس آف پولیس (ڈی جی پیز) کی بھوج (گجرات) میں منعقدہ کانفرنس جو اتوار کو اختتام پذیر ہوئی، اُس میں پیش کردہ مختلف خاکوں اور وہاں کئے گئے غور و خوض کا یہ موضوع رہا۔ انٹلی جنس بیورو کے زیراہتمام اِس سالانہ میٹ میں داخلی سلامتی کے مختلف پہلوؤں پر 10 خاکے پیش کئے گئے جبکہ ایک خاکہ کٹر پسندی کے موضوع پر رہا جو تلنگانہ ڈی جی پی انوراگ شرما نے پیش کیا، اور یہ اسلامک اسٹیٹ کی طرف سے دھمکیوں کے تناظر میں نہایت کلیدی خاکہ رہا۔ ذرائع کے مطابق انوراگ شرما نے کہاکہ مسلمانوں کو دیگر عام شہریوں کی طرح سماجی و معاشی فوائد نہ ملنے کی وجہ سے اُن میں علیحدگی کا احساس جاگزیں ہوگیا ہے۔ انھوں نے اُجاگر کیاکہ کس طرح اقلیتوں کی آبادی والے علاقوں کو عمومی طور پر بلدی سہولیات سے محروم رکھا گیا ہے اور وہاں معاشی مواقع کا فقدان بھی ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ اِن تمام پہلوؤں کے پیش نظر اِس کمیونٹی کا کٹر پسندی کی طرف میلان پیدا ہوگیا ہے۔ اس کی مثال پیش کرتے ہوئے کہ کس طرح مسلم نوجوانوں کی من مانی گرفتاریاں کٹر پسندی کا موجب بنی ہیں، انوراگ شرما نے 2007 ء کے مکہ مسجد بم دھماکوں کا حوالہ دیا۔ انھوں نے نشاندہی کی کہ اِن دھماکوں کے فوری بعد کس طرح پولیس نے مسلم نوجوانوں کو گرفتار کرلیا جو آخرکار بے قصور ثابت ہوئے۔ یہ دھماکے درحقیقت ہندو تنظیموں نے کرائے تھے۔

TOPPOPULARRECENT