Sunday , August 20 2017
Home / Top Stories / مسلمانوں کی تعلیمی و معاشی ترقی کیلئے آبادی کے تناسب سے تحفظات وقت کی اہم ضرورت

مسلمانوں کی تعلیمی و معاشی ترقی کیلئے آبادی کے تناسب سے تحفظات وقت کی اہم ضرورت

حکومت تلنگانہ کے سنجیدہ اقدامات ضروری ، پروفیسر کودنڈا رام کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔12جنوری(سیاست نیوز) صدرنشین تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی پروفیسر کودنڈارام نے کہاکہ تلنگانہ میں مسلمانوں کی تعلیمی اور معاشی حالات میںسدھار کے لئے آبادی کے تناسب سے تحفظات وقت کی اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے کہاکہ اس ضمن میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے لئے حکومت تلنگانہ کے سنجیدہ اقدامات بھی ضروری ہیں ریاست تلنگانہ میںآبادی کی اکثریت معاشی اور تعلیمی پسماندہ طبقات کی ہے جنھیں مراعات او رتحفظات فراہم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے ۔ آج یہاں ٹی جے اے سی دفتر میںمنعقدہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر کودنڈارا م نے کہاکہ مسلمانوں کو بھی دیگر طبقات کے ساتھ ترقی کے مساوی مواقع فراہم کرنے کے دعوے تو کئے جارہے ہیںمگر عملی طور پر حکومت کے اقدامات تلنگانہ کے مسلم اقلیتوں کی حالت زار میںتبدیلی کے لئے سازگار نظر نہیںآرہے ہیں۔ مسلم تحفظات کے ضمن میں کمیشن آف انکوائری کی تشکیل اور اس کی رپورٹ کو حکومت کا جرات مندانہ اقدا م قراردیتے ہوئے پروفیسر کودنڈارام نے کہاکہ کمیشن آف انکوائری یعنی سدھیر کمیٹی کی رپورٹ اور سفارشات کی بنیادپر حکومت تلنگانہ میںمسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرسکتی ہے جس کاانتخابات سے قبل چیف منسٹر نے جلسہ عام میںوعدہ کیاتھا۔ کودنڈارام نے کہاکہ تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی مسلم تحفظات کی مکمل تائید وحمایت میںہے اور تلنگانہ میںمسلم اقلیت کو تحفظات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے ہر محاذ پر تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی حکومت سے نمائندگی کریگی اور ضرورت پڑنے پر احتجاجی حکمت عملی کا بھی استعمال کریگی۔انہوں نے کہاکہ تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی ‘ مومنٹ فار پیس اینڈ جسٹس ‘سواراج ابھیان اور امن ویدیکاکے زیراہتمام 16جنوری کو مدینہ ایجوکیشن سنٹر میںتلنگانہ میںمسلم اقلیت کا تعلیمی اور اقتصادی موقف اور حالت زار میںسدھار کے اقدامات کے عنوان پر ایک مباحثہ منعقد کیاجارہاہے۔ کودانڈرام نے کہاکہ سوارج ابھیان سیاسی پارٹی کے قومی صدریوگیندر یادو ‘ جناب ظہیر الدین علی خان ‘ عادل محمد قومی کنونیر سوارج ابھیان وامن ویدیکا ‘ محمد خواجہ معین الدین کے علاوہ دیگر خطاب کریں گے ۔ انہوں نے کہاکہ ڈاکٹر غوث عثمانیہ یونیورسٹی مباحثے کے دوران پائور پوائنٹ پریزنٹیشن کے ذریعہ تمام شعبہ حیات میںمسلمانوں کی حالت زار پیش کریں گے۔ صدر مومنٹ فار پیس اینڈ جسٹس جناب خواجہ معین الدین نے مجوزہ مباحثہ میںشرکت کی عوام سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ ریاست تلنگانہ میںمسلمانوں کو 12 فیصدتحفظات کی فراہمی تک ہم اپنی جدوجہد کو جاری رکھیں گے ۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کے پاس سدھیر کمیٹی کی سفارشات ایک بہترین موقع ہے ۔ انہو ںنے مزیدکہاکہ بی سی کمیشن سے بھی ہمیںامید ہے کہ وہ مسلم تحفظات کے حق میںحکومت کو اپنی رپورٹ پیش کریگا۔ جناب عادل محمد نے کہاکہ ریاستی حکومتوں پر مسلمانوں کے ساتھ زیادتیوں کے سلسلے کو بند کرنے کی ذمہ داری عائد ہوتی ہے ۔انہوں نے کہاکہ بے قصور نوجوانوں کو فرضی مقدمات میںماخوذ کرکے انہیں برسوں تک جیلوں میںمحروس رکھاجارہاہے جو بعد میںباعزت بری ہورہے ہیں۔ پرشوتم ریڈی‘ پی رویندر ا ‘ پرہلادکے علاوہ دیگر بھی اس موقع پر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT