Monday , October 23 2017
Home / اداریہ / مسلمانوں کے دشمن

مسلمانوں کے دشمن

محبت کے یہی دوچار لمحے
جو مل جائیں تو سمجھو زندگی ہے
مسلمانوں کے دشمن
مسلمانوں کے خلاف فرعونی طاقتوں کا سرگرم رہنا کوئی نئی بات نہیں ہے ۔ کل کوئی اور تھا آج ڈونالڈ ٹرمپ کے روپ میں کوئی اور ہے تو اس سے مسلمانوں کے وجود کو کوئی فرق نہیں پڑتا۔ مسلمانوں نے جب تک اللہ کی رسی کو تھام رکھا ہے ، صراط مستقیم کا یقین رکھا ہے کوئی طاقت انھیں کمزور نہیں کرسکتی ۔ عارضی طورپر کسی جگہ کسی مسلماں کو زمانے کی صعوبتیں برداشت کرنی پڑی اور دشمنان اسلام کا شکار ہونا پڑے تو یہ ایک وقتی حالات کا آزمائشی مرحلہ متصور کرکے آگے بڑھتے رہیں تو مضبوط بنائے گئے عزم کو پختہ کرنے کا جذبہ پیدا کرنے کا ایک روشن پیمانہ ہونا چاہئے ۔ امریکہ سے لیکر آج ساری دنیا میں چند طاقتیں مسلمانوں اور اسلام کو بدنام کررہی ہیںتو  اس کے برعکس دوسرے اکثریتی گروپ مسلمانوں کے حق میں آواز اُٹھانے والے بھی موجود ہیں۔ ہم خوش نصیب قوم ہیں ۔ ہم پر اچھے برے وقت آتے رہے ہیں لیکن جب کوئی قوم عارضی حالات سے خوف زدہ ہوکر گمراہ ہوجائے تو اس کی تباہی یقینی ہے ۔ تاریخ شاہد ہے کہ مسلمان ایک ایسی قوم ہے جس نے صبر و تحمل سے کام لیا اور خود کے نزدیک بحرانوں کو بھٹکنے نہیں دیا ۔ اگر حالات ابتر ہوجاتے ہیں تو اس کا سامنا کیا گیا ۔ دراصل ان قوموں میں بنیادی سمت کا بحران پیدا ہوجاتا ہے تو یہ عام طورپر انحطاط کا شکوہ کرتے ہیں ۔ امریکی صدارتی امیدوار ریپبلکن لیڈر ڈونالڈ ٹرمپ کے مخالف مسلم بیان کے بعد ساری دنیا میں خاص کر امریکی عوام میں ہی ٹرمپ کی شدید مخالف ہونے لگی ہے ۔ ان کے علاوہ عالمی انفارمیشن ٹکنالوجی کی مقبول کمیٹیوں کے سربراہوں نے بھی ڈونالڈ ٹرمپ کے بیان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے مسلمانوں کے حق میں آواز بلند کی ۔ فیس بک کے سی ای او مارک زوکربرگ کے بعد گوگل کے سی ای او سندر پچائی نے مسلمانوں کی حمایت میں بیان دیا ۔ انھوں نے کہا کہ ہم کو مسلمانوں اور دیگر اقلیتی طبقہ کی بھرپور حمایت کرنی چاہئے ۔ امریکہ اور ساری دنیا میں رہنے والی مسلم برداری کی تائید کرتے ہوئے ان کے اندر پیدا ہونے والے خوف کو دور کرنا ہوگا ۔ امریکی صدارتی ری پبلکن امیدوار ٹرمپ نے کہا تھا کہ امریکہ میں مسلمانوں کے داخلے پر پابندی عائد کردی جائے ۔ ان کا یہ بیان کیلی فورنیا میں ایک مسلم جوڑے کی جانب سے کی گئی فائرنگ اور 14 افراد کی ہلاکت کے تناظر میں آیا تھا جبکہ پیرس میں حملوں کے بعد ساری دنیا میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز مہم شروع کی گئی ہے ۔ ہر بڑے ملک کے ایرپورٹس اور سرحدی علاقوں کو سخت سکیورٹی سے آراستہ کیا گیا ۔ امریکہ کے تمام ایرپورٹس پر پورٹ آف انٹری کے قوانین اور طریقہ کار کو سخت بنایا گیا ۔ کئی مسلمانوں کو ایرپورٹ سے ہی ڈی پورٹ کردینے کی بھی خبریں ہیں ۔ ایسے میں گوگل اور فیس بک جیسے بڑے انفارمیشن ٹکنالوجی کے اداروں کے سربراہوں نے مسلمانوں کے حق میں اپنی تائید کا اعلان کیا ہے تو ایک طرح سے مسلمانوں کے حوصلہ کو بڑھانے میں مدد ملے گی ۔ امریکہ ایک ایسا مقام ہے جہاں ایمگرینٹس کو اپنی منزل کامیاب بنانے کا موقع رہتا ہے ۔ یہاں کسی کو ترقی کرنے سے روکا نہیں جاتا ۔ امریکی عوام بھی مہذب طریقہ سے ہر قوم کی عزت کرتے ہیں لیکن جب ڈونالڈ ٹرمپ جیسے لوگ اشتعال انگیزی اور نفرت پیدا کرنے والے بیانات دیتے ہیں تو حالات خراب ہوجاتے ہیں ۔ ان دنوں ہر جگہ عدم رواداری کا چلن عام ہورہا ہے تو یہ افسوسناک و تشویشناک تبدیلی ہے جس کو روکنے کے لئے مسلمانوں کو بھی آگے آنا ہوگا ۔ وہ اپنے حق میں آواز اٹھانے والوں کو ساتھ لیکر چل سکتے ہیں۔ یہ مسلمانوں کیلئے ایک بہترین موقع ہے کہ وہ اسلام و مسلم دشمنوں کو ناکام بنانے کیلئے ہم خیال اور تائیدی افراد کی تائید حاصل کرکے اسلام اور مسلمانوں کے تعلق سے پیدا کردہ غلط فہمیوں کو دور کریں۔ مخالف اسلام سازشوں سے اقوام عالم پر جس طرح دہشت گردی کو غالب کیا گیاہے اور مسلمانوں کو ہر جگہ نشانہ بناکر انھیں ناکام کرنے کی کوشش کی جارہی ہے ان حالات کا پرامن جمہوری اور آزادی و حق خودارادیت سے مقابلہ کرنے کی ضرورت ہے ۔ اس خود ارادیت کی علمبردار قوم کو علاقائی اور عالمی سطح پر اپنا عظیم کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے ۔ ان میں صلاحیتوں کی کوئی کمی نہیں ہے مگر ضرورت حوصلہ کے مظاہرے کی ہے ۔ یقینا مسلمان اس وقت عالمی و داخلی پیچیدگیوں سے پریشان ہیں ایسے میں کسی مخالف مسلم کو ان حالات کا ناجائز فائدہ اٹھانے کا ہرگز موقع نہیں دیا جانا چاہئے ۔ گوگل اور فیس بک کے سربراہوں کی طرح ساری دنیا کے امن پسند انسانوں میں مسلمانوں کے لئے ہمدردی ہے تو اس سے استفادہ کرتے ہوئے مسلم قوم خود کو مضبوط اور سربلند بناسکتی ہے ۔ امریکی صدارتی امیدوار کو آئندہ سال سبق ضرور ملے گا اس سے قبل مسلمانوں کو ہر حال میں صبر و تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے توازن قائم رکھنا ہوگا ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT