Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلمان باشعور قوم ، صحیح رہنمائی پر درپیش مسائل کا حل ممکن

مسلمان باشعور قوم ، صحیح رہنمائی پر درپیش مسائل کا حل ممکن

تعلیمی و معاشی حالات پر گول میز کانفرنس ، جناب ظہیر الدین علی خاں و دیگر کا خطاب
حیدرآباد ۔ 22 اگست (سیاست نیوز) جناب ظہیر الدین علی خان نے کہاکہ مسلمان باشعور قوم ہیں ‘صحیح سمت مسلمانوں کی رہنمائی قومی سطح پر مسلم سماج کودرپیش مسائل کے حل کے لیے موثر اقدام ثابت ہوگی ۔ آج یہاں سنٹر فار سوشل اسٹیڈیز کی جانب سے تلنگانہ میں مسلمانوں کے تعلیمی اور معاشی حالات کا جائزہ کے عنوان پر منعقدہ گول میز کانفرنس سے خطاب کے دوران جناب ظہیر الدین علی خان نے کہاکہ مرکزی او رریاستی حکومت کی جانب سے جاری کردہ فلاحی اسکیمات کو مسلمانوں تک پہنچانے کی ضرورت ہے ۔ انہو ں نے مزیدکہاکہ زیادہ تر لوگ آج بھی حکومت کی فلاحی اسکیمات سے واقف نہیں ہے ۔ انہوں نے حکومتوں کی فلاحی اسکیمات کے متعلق کامیاب شعور بیداری مہم کے لئے این جی اوز اور سیاسی جماعتوں کے اندر اخلاص کو ضروری قراردیا۔ انہوں نے کہاکہ خلوص اور خالص مسلمانوں کو فائدہ پہنچانے کی نیت سے شروع کیا جانے والا ہر کام کامیاب ہوگا۔ جناب ظہیر الد ین علی خان نے کہاکہ ادارہ سیاست نے پولیس ٹریننگ کے چارکیمپ منعقد کئے اور مصلح دستوں اور سیول پولیس میںایک سوسے زائد بچوں کو ملازمت ملی۔ انہو ںنے کہاکہ مسلمان لازوال قوم ہیں جو ہاتھ آیا کوئی بھی موقع نہیں گنوا سکتی۔انہوں نے ادارہ سیاست کی جانب سے حکومت کی فلاحی اسکیمات کے متعلق چلائی جارہی شعور بیداری مہم اورہیلپ لائن سنٹر کا بھی اس موقع پر ذکر کیا۔ انہوں نے کہاکہ حالیہ عرصہ میں حکومت تلنگانہ کی جانب سے بیرونی ممالک میں پڑھائی کے لئے جاری کردہ فنڈزکے متعلق آن لائن درخواستوں کے ادخال کے موقع پر نوجوان کے اندر حکومتوں کی فلاحی اسکیمات سے استفادہ کا جو جذبہ دیکھنے کا ملاہے اس کی ماضی میںکوئی نظیر نہیں ملتی۔ جناب ظہیر الدین علی خان نے کہا انفارمیشن یا کمیونٹی سنٹر قائم کرنے کے بجائے مساجد کو اصلاح معاشرے کا مرکز بنانے کی ضرورت ہے کیونکہ تاریخ اس بات کی شاہد ہے کہ دنیا کا ہر اسلامی انقلاب مساجد سے آیا اور مسلمانوں کی سرخروئی کا سبب بھی بنا۔ انہوں نے کہاکہ مسلم قیادتیںحکومتوں کی اعلی کار بن کر مسلمانو ںکے مسائل کو نظر انداز کرنے کاکام کررہی ہیں۔انہوںنے کہاکہ سیاسی جماعتوں پر تکیہ کرنے کے بجائے مسائل کے حل میںاین جی اوزکو آگے آنے کی ضرورت ہے ۔ جناب ظہیر الدین علی خان نے سرکاری شعبے جات کے علاوہ سیاسی تحفظات کو بھی ضروری قراردیتے ہوئے کہاکہ سرپنچ سطح سے مسلمانوں کو آبادی کے تناسب سے تحفظات فراہم کرنا سیاسی جماعتوں کی اولین ذمہ داری ہوگی۔انہوں نے تحفظات اور مسلم مسائل کے حل کی لڑائی ایس سی‘ ایس ٹی کے ساتھ ملکر شروع کرنے کی بھی اس موقع پر تجویز پیش کی۔ کمشنر میٹاریٹی ویلفیر ڈپارٹمنٹ جناب جلال الدین اکبر نے گول میز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسلم مسائل کے حل میں ریاستی حکومت کو سنجیدہ قراردیا۔ انہو ںنے کہا حکومت کی فلاحی اسکیم شادی مبارک کے بہتر نتائج برآمد ہورہے ہیں ۔ انہو ںنے یہ بھی کہاکہ جن دھن یوجنا کے تحت شروع کردہ بینک کھاتوں میں اکیاون ہزار کی رقم جمع کرنے میں دشواریاں پیش آرہی تھیں لہذا میناریٹی ویلفیر ڈپارٹمنٹ آر بی آئی کی نئی گائیڈ لائنس کے تحت 49ہزار اور دو ہزار پر مشتمل دو چیکس درخواست گذار کے کھاتے میںجمع کرارہا ہے جس سے جن دھن یوجنا کے تحت بینک کھاتہ داروں کو درپیش مسائل کو دور کیا جارہا ہے۔ جناب جلال الدین اکبر نے کہا 1993میں میناریٹی ڈپارٹمنٹ کا قیام عمل میں آیا مگر عملے کی کمی کے سبب محکمہ کی کارکردگی میںبہتری نہیں لائی جاسکی۔ انہوںنے کہاکہ مسلمانوں کی اکثریت سلم علاقے میں رہائش پذیر ہے جہاں پر حکومت کی فلاحی اسکیمات پوری طرح نہیں پہنچتی ہیں۔ انہوں نے یہ بھی اعتراف کیا کہ ریاست کے ہر ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر س کے سلم علاقوں میں بھی مسلمانوں کی اکثریت پائی جاتی ہے۔ جناب جلال الدین اکبر نے مستقل عملے کی کمی کے سبب مسلمانوں کے مسائل سے محکمے کی واقفیت میں کمی کا بھی اعتراف کیا۔ انہوں نے کہاکہ دس کے منجملہ 6اضلاع میں عملے کی کمی کا ذکر کیا۔ انہوں نے رضاکارانہ تنظیموں کی جانب سے اس قسم کے پروگرام کو اور مسلمانوں کے اندر حکومت کی فلاحی اسکیمات کے متعلق شعور بیداری مہم کے جذبے کو بے مثال قراردیا۔ جنا ب جلال الدین اکبر نے اندرون دس یوم محکمہ اقلیتی بہبود کی جانب سے پبلک سروس کمیشن کی جانب سے جاری کردہ ایک لاکھ ملازمتوں کے اعلامیہ میںمسلم امیداروں کی حصہ داری کو یقینی بنانے کے لئے تربیتی کیمپ بھی منعقد کرنے کا اعلان کیا۔ انہوں نے کہا عنقریب اس اعلان بھی کیا جائے گا۔ جناب نعیم اللہ شریف ‘ محمد افضل ‘ محترمہ روبینہ‘ محترمہ ذکیہ‘ محمد اکرم‘ جناب علی اسد کے علاوہ دیگر نے بھی اس گول میز کانفرنس سے خطاب کیا۔ کانفرنس کی کارروائی محمد احسن عابد نے چلائی جبکہ انتظامات ایس کیو مقصود نے دیکھے ۔

TOPPOPULARRECENT