Thursday , August 24 2017
Home / Top Stories / مسلم آبادی میں اضافہ بھارت کو اسلامی رنگ دینے کی سازش؟

مسلم آبادی میں اضافہ بھارت کو اسلامی رنگ دینے کی سازش؟

آر ایس ایس کے ترجمان ’آرگنائزر‘ کا اداریہ

نئی دہلی ، 29 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) مردم شماری کے مذہبی اعداد و شمار میں مسلم آبادی میں اضافے پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے آر ایس ایس کی اشاعت ’آرگنائزر‘ نے تعجب کیا ہے کہ آیا یہ رجحان ’’بھارت کو اسلامی رنگ دینے کی عظیم تر سازش‘‘ ہے۔ ساتھ ہی اداریہ نے مردم شماری کے مذہبی ڈاٹا میں سکھوں اور بدھسٹوں کی تعداد میں گراوٹ کو ’’پریشان کن‘‘ قرار دیا اور کہا کہ جب کبھی دیسی عقائد میں انحطاط آیا، علحدگی پسند رجحانات میں اضافہ ہوا اور اس کے سدباب کیلئے ٹھوس پالیسی اقدامات پر زور دیا۔ اداریہ نے نشاندہی کی کہ ہندوستان میں ہندوؤں اور مسلمانوں کی آبادی میں اضافہ کی شرح معکوس تناسب میں ہے اور یہ عدم توازن گزشتہ تین دہوں میں بڑھتا رہا ہے جن میں اس برادری نے لگاتار تین مرتبہ اس طرح کا اضافہ درج کرایا ہے۔ اور یہ کہا گیا کہ مسلمانوں کا حصہ ملک کی جملہ آبادی میں 1981-1991ء اور 1991-2001ء کے درمیان یکساں 0.8 فیصدی پوائنٹس بڑھا ہے۔ اداریہ نے سوال اٹھایا کہ کیا یہ اضافہ محض مسلم خاندانوں کی بڑھتی جسامت کو ظاہر کرتا ہے؟ آیا یہ بھارت کو اسلامی رنگ دینے کی عظیم تر سازش ہے؟ کیا یہ معاملہ اس برادری کی کمتر معاشی ترقی سے تعلق رکھتا ہے جیسا کہ بعض رپورٹس دعویٰ کرتے ہیں؟ ’’تعداد کی پالیسی کا جواز بنانا‘‘ کے زیرعنوان اداریہ نے کہا، ’’بھارت میں 2050ء میں 311 ملین مسلمان ہوجانے کی توقع ہے، جو عالمی آبادی کا 11 فیصد ہے۔ اس سے ہندوستان دنیا میں مسلمانوں کی سب سے بڑی آبادی والا ملک بن جائے گا‘‘۔ اداریہ نے کانگریس لیڈر منی شنکر ایئر کو ان ریمارکس کیلئے کہ تازہ ترین مذہبی ڈاٹا ’’فرقہ وارانہ تشدد‘‘ کا موجب بنے گا، ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ ایسی پارٹی کا لیڈر جس نے ’’سکیولرازم‘‘ کے نام پر ’’ووٹ بینک کی سیاست‘‘ کو ’’فروغ‘‘ دیا، اب ان اعداد و شمار کی فرقہ وارانہ بنیادوں پر مذمت کررہا ہے۔ دیسی مذاہب کے پیروؤں کی تعداد میں کمی علحدگی پسند رجحانات میں اضافہ کرتی ہے تو تاریخی حقیقت ہے۔ منی شنکر جیسے ’سکیولر قائدین‘ نہیں چاہتے کہ اس حقیقت کا سامنا کریں۔ اُن کی تشویش سے اس منطق کا جواب بھی مل جاتا ہے کہ ماضی میں یو پی اے حکومت نے یہ ڈاٹا جاری کیوں نہیں کیا۔

TOPPOPULARRECENT