Thursday , August 17 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلم مجاہدین آزادی کی قربانیوں سے نوجوان نسل کو واقف کرانا وقت کی اہم ترین ضرورت

مسلم مجاہدین آزادی کی قربانیوں سے نوجوان نسل کو واقف کرانا وقت کی اہم ترین ضرورت

سالارجنگ میوزیم میں مجاہدین آزادی کی تصویری نمائش کا افتتاح، جناب زاہد علی خاں اور محمد علی شبیر کا خطاب
تصویری نمائش آر ایس ایس کی مخالف مسلم مہم کا منہ توڑ جواب
حیدرآباد ۔ 6 اگست (سیاست نیوز) ہندوستان میں مسلم مجاہدین آزادی کی خدمات کو ایک منظم منصوبہ کے تحت فراموش کیا جارہا ہے حالانکہ مسلم مجاہدین آزادی جدوجہد آزادی میں جو قربانیاں دی ہیں، جس طرح کی مصیبتیں برداشت کی ہیں اس کے بارے میں ملک کی نوجوان نسل کو واقف کرایا جاتا ہے تو اس سے ملک میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو غیرمعمولی استحکام حاصل ہوگا۔ روزنامہ سیاست ہر اس تنظیم اور فرد سے تعاون کیلئے تیار ہے جو ہندوستانی نوجوان نسل کو مسلم مجاہدین آزادی کی قربانیوں اور ان کے کارناموں سے واقف کرانے کا بیڑہ اٹھاتی ہیں۔ ان خیالات کا اظہار ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں نے سالارجنگ میوزیم کے ایسٹرن بلاک میں منعقدہ مسلم مجاہدین آزادی کے پورٹریٹس کی نمائش کا افتتاح کرنے کے بعد اپنے خطاب میں کیا۔ اس نمائش کا اہتمام گریٹر حیدرآباد یوتھ اسوسی ایشن اور ایم ڈی ایف نے مشترکہ طور پر کیا تھا۔ نمائش کے اہتمام میں سماجی و آر ٹی آئی جہدکار انجینئر عمران نے نمایاں کردار ادا کیا۔ 20 اگست تک جاری رہنے والی اس نمائش میں دو سو سے زائد مسلم مجاہدین آزادی کے پورٹریٹس مشاہدہ کیلئے رکھے گئے ہیں۔ جناب زاہد علی خاں نے اپنا سلسلہ خطاب جاری رکھتے ہوئے مزید کہا کہ آج پہلے سے کہیں زیادہ فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو مضبوط بنانے کی ضرورت ہے۔ فرقہ پرست طاقتیں ایک منصوبہ بند سازش کے تحت نئی نسل کو مسلم مجاہدین آزادی کے کارناموں سے دور رکھ رہے ہیں حالانکہ وہ خود بھی اچھی طرح جانتے ہیں کہ جدوجہد آزادی میں مسلم مجاہدین آزادی نے نہ صرف اپنے ملک کی آزادی کو یقینی بنانے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے بلکہ اپنی دولت کو بھی ملک پر قربان کردیا حد تو یہ ہیکہ آزادی کے ان متوالوں نے دولت ختم ہونے پر بھرے بازار میں اپنے بیٹے کی تک بولی لگادی۔ یہ ایسی مثال ہے جو ملک کی تاریخ میں کوئی نہیں قائم کرسکتا۔ جناب زاہد علی خاں نے ہندوستان میں اپنی طرز کی اس منفرد نمائش کے اہتمام پر انجینئر محمد عمران اور گریٹر حیدرآباد اسوسی ایشن کے صدر محمد عرفان کی ستائش کی اور کہا کہ دونوں بھائی ملک و قوم کو مسلم مجاہدین کی قربانیوں سے واقف کرانے کا جو بیڑہ اٹھایا اس کی جتنی ستائش کی جائے کم ہے۔ اس موقع پر قانون ساز کونسل میں قائد اپوزیشن جناب محمد علی شبیر نے کہا کہ بی جے پی حکومت میں تاریخ کو مسخ کیا جارہا ہے۔ تعلیمی شعبہ کو زعفرانی رنگ میں رنگا جارہا ہے۔ ایک سازش کے تحت مسلم مجاہدین آزادی کی قربانیوں سے متعلق داستان حریت کو مٹانے کی کوشش ہورہی ہے لیکن آر ایس ایس اور اس کی ذیلی تنظیموں کو یہ جان لینا چاہئے کہ اس ملک کی مٹی میں مسلم مجاہدین آزادی کے خون کی خوشبو بسی ہوئی ہے۔ انہوں نے پرزور انداز میں یہ بھی کہا کہ آر ایس ایس کا ہندوستان کی جنگ آزادی میں کوئی رول نہیں۔ سنگھ پریوار کے قائدین نے جنگ آزادی میں کس قسم کا رول ادا کیا وہ تاریخ کے اوراق میں محفوظ ہے۔ آر ایس ایس اور اس کے قائدین مسلمانوں سے حب الوطنی کا سرٹیفکیٹ مانگتے ہیں۔ ان کیلئے سالارجنگ میوزیم میں منعقدہ یہ نمائش ایک منہ توڑ جواب ہے۔ جناب محمد علی شبیر نے ٹی آر ایس حکومت پر بھی شدید تنقید کی اور کہا کہ مولانا ابوالکلام آزاد سے معنون پراجکٹ کے نام تبدیل کئے جارہے ہیں۔ کے سی آر نے اقتدار سنبھالنے کے فوری بعد مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات دینے کا وعدہ کیا تھا لیکن دو سال گذرجانے کے باوجود ان کا وعدہ وفا نہ ہوسکا۔ انہوں نے یاد دلایا کہ کانگریس دورحکومت میں مسلمانوں کو ملازمتوں اور تعلیم کے شعبہ میں 4 فیصد تحفظات فراہم کئے گئے۔ فیس باز ادائیگی اسکیم شروع کی گئی جس کے نتیجہ میں بے شمار مسلم طلبہ کو میڈیسن، انجینئرنگ اور دیگر پیشہ ورانہ کورسیس میںداخلے ملے اور سرکاری ملازمتیں حاصل ہوئیں۔ گریٹر حیدرآباد یوتھ اسوسی ایشن کے صدر محمد عرفان نے کہا کہ اس طرح کی نمائش کا ہر سال انعقاد عمل میں لایا جائے گا تاکہ نوجوان نسل اپنے آبا و اجداد کے کارناموں سے واقف ہو۔ صدر ایم ڈی ایف جناب عابد صدیقی نے نظامت کے فرائض انجام دیئے۔ اس موقع پر کانگریس قائد و سابق کارپوریٹر محمد غوث، سابق نائب صوبیدار محمد مظہر حسین، بہادر شاہ ظفر کے خاندان سے تعلق رکھنے والی سلطانہ بیگم اور شیرمیسور ٹیپوسلطان کے خانوادہ سے تعلق رکھنے والے شہزادہ سید منصور بھی موجود تھے۔ انہیں جناب زاہد علی خاں اور جناب محمد علی شبیر نے تہنیت پیش کی۔ انجینئر محمد عمران کے شکریہ پر یہ یادگار تقریب اختتام کو پہنچی۔

TOPPOPULARRECENT