Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / مسلم نوجوانوں نے مندروں کی صفائی انجام دی

مسلم نوجوانوں نے مندروں کی صفائی انجام دی

چینائی میں سیلاب کی مصیبتوں کے درمیان ہندو مسلم اتحاد کا مظاہرہ
چینائی 9 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) چینائی میں سیلاب کی تباہ حالی سے جہاں زبردست جانی و مالی نقصان ہوا ہے وہیں اس آفت سماوی سے دلوں کو چھونے والی کئی کہانیاں منظر عام پر آرہی ہیں۔ یہ ایسی کہانیاں ہیں جو اتحاد و اتفاق فرقہ وارانہ ہم آہنگی سے متعلق ہندوستان کی گنگا جمنی تہذیب کی عکاسی کرتی ہیں۔ سیلاب سے متاثرہ اس شہر میں جماعت اسلامی ہند کے تقریباً 50 ارکان مساجد اور منادر کی صفائی کررہے ہیں۔ اس کام میں ان کے جوش و خروش کو دیکھ کر اکثر لوگ حیران ہیں۔ انگریزی روزنامہ دی ہندو میں اس تعلق سے ایک رپورٹ شائع ہوئی ہے جس میں جماعت اسلامی ہند کو ایک غیر سرکاری تنظیم قرار دیتے ہوئے بتایا گیا کہ اس کے زائد از 50 کارکنوں نے پچھلے دو دنوں سے کوٹتورپورم اور سعیدہ پیٹ میں دو مندروں کی بڑی ہی احتیاط کے ساتھ صفائی کی۔ جماعت اسلامی ہند کی سماجی خدمات سے متعلق طالبہ ونگ کے سکریٹری پیر محمد نے جو انجینئرنگ میں پوسٹ گریجویٹ ہیں بتایا ’’شدید سیلاب کے باعث ہم نے دیکھا کہ بعض علاقہ شدید متاثر ہوئے ہیں اور ہمارے ہندو بھائی مندروں میں عبادت نہیں کر پارہے ہیں ایسے میں ہم نے ان دو علاقوں میں جو سیلاب سے شدید متاثر ہوئے ہیں مسجدوں، مندروں اور گلیوں و سڑکوں کی صفائی شروع کی۔ آنے والے دنوں میں ہم دوسرے علاقوں میں بھی اسی طرح کی سماجی خدمات انجام دیں گے‘‘ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ صفائی کے اس کام میں لوگوں نے نہ صرف جماعت کے کارکنوں کی مدد کی بلکہ اس بات پر بہت خوش ہوئے کہ صفائی کا کام مکمل کیا گیا۔ جماعت اسلامی ہند طلبہ ونگ چینائی کے سکریٹری جلال الدین کے مطابق وہ اور ان کے ساتھیوں نے دونوں علاقوں میں واقع مندروں کی بڑی احتیاط کے ساتھ صفائی کی دوسری جانب پرنس آف ارکاٹ محمد عبدالعلی کی قیامگاہ امیر محل ایک طرح سے راحت و بازآباد کاری کے لئے آنے والے سامان کا ویر ہاوس بن گئی ہے ۔ پرنس محمد عبدالعلی نے مصیبت کی اس گھڑی میں بلا لحاظ مذہب و ملت رنگ و نسل متحد ہونے پر چینائی کے شہریوں کی ستائش کی۔

TOPPOPULARRECENT