Sunday , September 24 2017
Home / ہندوستان / مسلم نوجوان نے محض اسلحہ لائسنس کیلئے مذہب تبدیل کردیا

مسلم نوجوان نے محض اسلحہ لائسنس کیلئے مذہب تبدیل کردیا

لکھنؤ۔/23اپریل، ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک مسلم نوجوان نے محض رائفل کا لائسنس حاصل کرنے کیلئے اپنا مذہب تبدیل کرلیا۔ یہ افسوسناک واقعہ ضلع باغپت میں پیش آیا جہاں فرقان احمد نے اپنے سر کے بال صاف کرالئے اور سر پر چوٹی دار بال چھوڑ لئے اور پیشانی پر تلک لگائی اور عہدیداروں کے سامنے یہ اعلان کیا کہ وہ ہندو ہے اور اس کا نام پھول سنگھ ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ فرقان احمد گزشتہ چھ سال سے لائسنس حاصل کرنے کی کوشش کررہا تھا لیکن مسلمان ہونے کی بناء انکار کیا جاتا رہا۔ اس نے سوچا کہ اس مذہبی امتیازی سلوک کو ختم کرنا ہوگا۔ وہ سیکورٹی گارڈ کی حیثیت سے ملازمت کا خواہاں تھا لیکن اس کیلئے اسلحہ کا لائسنس ہونا ضروری ہے۔ فرقان دراصل ای رکشا چلاتا ہے اور اپنی آمدنی میں اضافہ کیلئے پارٹ ٹائم سیکوریٹی گارڈ کی خدمات انجام دینے کا خواہاں ہے۔ اس نے بتایا کہ گزشتہ چھ سال کی کوشش کے بعد اس نے جب مذہب تبدیل کیا تو لائسنس کا حصول اس کے لئے آسان ہوگیا۔ فرقان نے بتایا کہ پہلی مرتبہ 2010میں اس نے لائسنس کیلئے درخواست دی تھی اور مختلف دفاتر کے چکر لگاتا رہا۔ 2014میں اسے یہ جواب دیا گیا کہ اس کی فائیل لاپتہ ہوچکی ہے۔ اس نے تازہ درخواست داخل کی اور پھر وہی بھاگ دوڑ شروع ہوگئی۔ چھ سال کی کوششوں کے باوجود اسے لائسنس حاصل کرنے میں ناکامی ہوئی۔ حالانکہ تقریباً 378افراد کو لائسنس دیا جاچکا تھا۔ اس کے دوست نے بتایا کہ ممکن ہے فرقہ وارانہ طور پر حساس ضلع میں رہنے اور مسلمان ہونے کی وجہ سے اسے لائسنس جاری نہیں کیا جارہا تھا چنانچہ اس نے مذہب تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا۔ فرقان کا کہنا ہے کہ میرے بچوں کو پیٹ بھر روٹی کھلانا میرے لئے مذہب سے زیادہ اہم ہے لہذا اب سے وہ پھول سنگھ ہے اور آئندہ بھی وہ اسی نام سے لائسنس کیلئے درخواست دے گا اور بہت جلد اسے لائسنس مل بھی جائے گا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT