Tuesday , May 23 2017
Home / شہر کی خبریں / مصنف کے لیے شخصیتوں سے متعلق تحریر کرنا مشکل کام

مصنف کے لیے شخصیتوں سے متعلق تحریر کرنا مشکل کام

چھوٹی سی غلطی تنقید کا باعث بنتی ، صریر ولا کی رسم اجراء ، جناب زاہد علی خاں کا خطاب
حیدرآباد۔14مارچ(سیاست نیوز) مدیر اعلی روزنامہ سیاست جناب زاہد علی خان نے کہاکہ کسی بھی مصنف کے لئے شخصیتوں کے متعلق تحریر کرنا سب سے مشکل کام ہے کیونکہ کسی بھی شخصیت کے متعلق تحریرات کے دوران چھوٹی سے غلطی مصنف کے لئے باعث تنقید بنتی ہے مگر صریر ولا کے مصنف تقی عسکری ولا کی اب تک کی تمام تحریرات تنقید سے پاک ہیں ۔ آج یہاں ادارے سیاست کی گولڈن جوبلی ہال میں ممتاز مصنف شاعر ونثر نگار تقی عسکری ولا کی 17ویں کتاب’ صریرولا‘ کی رسم اجرائی تقریب سے وہ خطاب کررہے تھے ۔ ڈاکٹر شوکت علی مرزی صدر کل ہند نہج البلاغہ سوسائٹی کی صدارت میںمنعقدہ تقریب رسم اجرائی میں اسپیشل میٹروپولٹین مجسٹریٹ باشاہ نواز خان ‘نواب سید مصطفی علی خان ‘ محترم شجا عت علی آئی آئی ایس جوائنٹ ڈائرکٹر دودرشن چینائی نے مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے شرکت کی۔تقریب رسم اجرائی کا آغاز مولانا محمد شعیب رضا خان کی قرات کلام پاک سے ہوا جبکہ نعت رسول پیش کرنے کی سعادت احمد صدیقی مکیش کو ملی ۔ تقریب کی کاروائی جناب عابد صدیقی نے چلائی۔ جناب زاہد علی خان نے اپنے سلسلہ خطاب کو جاری رکھتے ہوئے کہاکہ تقی عسکری ولا کی نئی تصنیف صریر ولا میںشائع مضامین جو روزنامہ سیاست میںپہلے ہی شائع ہوچکے ہیں ۔ جناب زاہد علی خان نے کہاکہ مضامین کی اشاعت سے قبل ادارہ کا ذمہ دار عملہ متعلقہ مضامین پر کافی غوروخوص کرتا ہے اور دوتین افراد کی جانچ کے بعد اسے اشاعت کے لئے بھیجتے ہیں۔ انہوںنے مزیدکہاکہ تقی عسکری ولا کے کسی بھی مضمون میںکوئی متنازع بات ہمیںدیکھنے کو نہیںملی اور یہی ایک مصنف کی سب سے بڑی کامیابی ہے۔ جناب زاہد علی خان نے اجلاس کے دوران ملک کے حالات میںتبدیلی کے متعلق کئے گئے تبصر ے کے جواب میںکہاکہ ہم اللہ تعالی سے مرعوب ہونے والی قوم ہیں ۔ جناب زاہدعلی خان نے مشترکہ تہذیب کے فروغ میں اکثریتی طبقے سے تعلق رکھنے والے سکیولر ذہن افراد کی دلچسپی کو ضروری قراردیا۔انہوں نے مزیدکہاکہ کیونکہ اکثریتی فرقہ میںسیکولر ذہن کے افراد کی اکثریت بھی پائی جاتی ہے لہذا یہ ذمہ داری ان پر عائد ہوتی ہے کہ وہ ایک ایسا پلیٹ فارم تیار کریں جہاں پر تمام قوموں کے سیکولر ذمہ داران کو جمع کیاجاسکے۔ جناب زاہد علی خان نے نہج البلاغہ سوسائٹی کے تحت مولائے کائنات حضرت علی کرم اللہ وجہہ ؓ کی اقوال کی اشاعت کا احیاء عمل میںلانے کی بات بھی کہی او ربتایا کہ ادارے سیاست کی جانب سے حضرت علی ؓ کے مبارک اقوام کی اشاعت کا سلسلہ بہت جلد شروع کیاجائے گا۔جناب زاہد علی خان نے حیدرآباد دکن کے ادیبوں‘ شاعروں کے ساتھ امتیاز پر بھی افسوس کا اظہار کیا او رکہاکہ شمالی ہند میںجہاں اُردو اور ہندی کا امتزاج کے ذریعہ شاعری کی جاتی ہے وہیں پر حیدرآباد میںآج بھی خالص اُردو زبان کااستعمال کیاجاتا ہے باوجود اسکے حیدرآباد دکن کے شاعروں اور ادیبوں کو وہ مقام حاصل نہیںہوا جو شمالی ہندوستان کے شاعروں کو حاصل ہے ۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ شہر حیدرآباد کے اُردو شعرو ادب سے وابستہ شخصیتوں کی پذیرائی کرے۔ جناب زاہد علی خان نے مصنف ’ صریر والا‘ جناب تقی عسکری ولا کو ان کی 17ویں کتاب کی رسم اجرائی پر مبارکباد پیش کرتے ہوئے مستقبل میں مزید کتابوں کی اشاعت کے لئے نیک تمنائوں کا بھی اظہار کیا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT