Wednesday , September 20 2017
Home / سیاسیات / مغربی بنگال اب کمیونسٹ ریاست برقرار نہیں رہی

مغربی بنگال اب کمیونسٹ ریاست برقرار نہیں رہی

مرکزی فنڈس کی حصولیابی کیلئے ترنمول کانگریس ایم پی کا شوشہ
نئی دہلی ۔ 7 ۔ دسمبر : ( سیاست ڈاٹ کام) : ترنمول کانگریس کے رکن پارلیمنٹ سدیدپ بندھوا پادھیائے نے آج کہا کہ مغربی بنگال اب کمیونسٹ ریاست برقرار نہیں رہی ۔ اور مرکزی حکومت یہاں پر مذہبی اور روحانی سیاحت کے لیے فنڈس مختص کیوں نہیں کررہی ہے ۔ انہوں نے لوک سبھا میں یہ مسئلہ اٹھاتے ہوئے دریافت کیا کہ بی جے پی کی زیر قیادت حکومت ، مغربی بنگال میں مذہبی ٹورازم ، کے لیے فنڈس مختص کرنے میں پس و پیش کیوں کررہی ہے ۔ جب کہ یہ اب کمیونسٹ ریاست برقرار نہیں رہی ۔ وزیر سیاحت مہیش شرما جب سیاحوں کو راغب کرنے کے لیے مذہبی مقامات کو فروغ دینے کے منصوبہ کا اعلان کررہے تھے ۔ اس وقت ٹی ایم سی رکن پارلیمنٹ سے یہ مسئلہ اٹھایا ۔ جس کا جواب دیتے ہوئے مسٹر شرما نے کہا کہ ریاستی حکومتوں کی جانب سے تفصیلی پراجکٹ رپورٹس اور فنڈس کے استعمال کا سرٹیفیکٹ پیش کرنے پر فنڈس جاری کئے جاتے ہیں ۔ اور ٹی ایم سی رکن پارلیمنٹ سے کہا کہ وہ بھی اس قواعد کی پابندی کرتے ہوئے مرکز کو رپورٹ پیش کریں ۔ تاہم سدیپ بندھواپادھیائے نے مرکزی وزیر سے یہ اصرار کیا کہ مذہبی اور روحانی مراکز ( سرکیوٹ ) میں بیلورمٹھ اور دیگر مقامات کو شامل کیا جائے اور بتایا کہ حال ہی میں وزیر اعظم نے بیلورو مٹھ کا دورہ کیا تھا ۔ ایک تحریری جواب میں مسٹر مہیش شرما نے کہا کہ وزارت سیاحت نے سودیش درشن اسکیم شروع کی ہے تاکہ 12 روحانی مراکز بشمول بدھسٹ سرکیوٹ ، کرشنا سرکیوٹ اور رامائن سرکیوٹ کو فروغ دیا جائے ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ حکومت نیپال سے سری لنکا تک رام ون گمن پتھ ، فروغ دینے کا منصوبہ بنایا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT