Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / ملک میں دلت و مسلمانوں کو نشانہ بنانے سے جمہوریت کو خطرہ

ملک میں دلت و مسلمانوں کو نشانہ بنانے سے جمہوریت کو خطرہ

ساہتیہ اکیڈیمی کے ایوارڈ واپسی قابل ستائش ، سوسائٹی فار پرموشن آف ٹولرینس کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔28اکٹوبر(سیاست نیوز) قومی سطح پر بڑھتی فرقہ پرستی اور آزادی اظہار خیال پر پابندی کے بڑھتے واقعات کے خلاف مصنفوں اور دانشواروں کی جانب سے ساہتیہ اکیڈیمی ایوارڈس کی واپسی کو قابلِ ستائش اقدام قراردیتے ہوئے سوسائٹی فار پرموشن آف ٹولرینس کے کوآرڈینٹر سید علی ہاشمی نے کہاکہ امن پسند جماعتوں اور تنظیموں کے ساتھ مل کر ایوارڈس واپس کرنے والے مصنفوں اور دانشوروں کی ہمت افزائی کی جائے گی اور صدر جمہوریہ ہند پرنب مکرجی سے ملاقات کرتے ہوئے قومی حالت پر کنٹرول کے لئے نمائندگی بھی کی جائے گی۔ وہ آج یہاں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جناب سید علی ہاشمی نے کہاکہ مرکز میں نریندر مودی حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد جس طرح کے واقعات رونما ہوئے ہیں ان کی سابق میںکوئی نظیر نہیں ملتی۔انہوں نے مزیدکہاکہ بے بنیاد اور من گھڑت کہانیو ں کے ذریعہ معصوم دلت اور مسلم طبقات کو فرقہ پرستوں کے ہاتھوں نشانہ بنایا جارہا ہے جس پر اپنی خاموشی کو توڑتے ہوئے ہندوستان کے ممتازمصنفین نے ساہتیہ اکیڈیمی ایوارڈ اور پدمابھوشن جیسے ایوارڈس کو واپس کرتے ہوئے مرکزکی نریندر مودی حکومت کی ناکامیوںکو منھ توڑ جواب دیا ہے جس کی ہر گوشہ سے ستائش ضروری ہے۔ڈاکٹر کولیرو چرنجیوی نے دلت اور مسلمانو ںکو مسلسل نشانہ بنانے کے واقعات سے ہندوستان کی جمہوریت کو درپیش خطرات میں مزید اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ انہوں نے اس ضمن میں دہلی کے جنتر منتر پر امن پسند سکیولر جماعتوں اور تنظیموں کے ساتھ مل کر احتجاجی دھرنا منظم کرنے اور صدر جمہوریہ ہند پرنب مکرجی سے ملاقات کرکے ایک تحریری یادواشت پیش کرنے بھی اعلان کیا ۔انعام الرحمن خان غیور نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ قانون ہاتھ میں لینے والوں کے خلاف سخت رویہ اس قسم کے واقعات کی روک تھام میں مددگار ثابت ہوگا مگر مرکزی اور ریاستی حکومتیں فرقہ پرستوں کی دہشت پر خاموش ہیں جو ہندوستان کے جمہوری نظام کے لئے ایک اور سنگین خطرہ ثابت ہوگا ۔ پروفیسررمیش ریڈی‘علی الدین قادری‘ ڈاکٹراین ہاشمی‘ آصف پاشاہ‘ کرسچین لیزارس کے علاوہ دیگر بھی اس موقع پر موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT