Thursday , October 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ملک میں عدم رواداری اور تشدد ناقابل قبول

ملک میں عدم رواداری اور تشدد ناقابل قبول

گوداوری کھنی ۔20نومبر ( فیکس ) ملک میں بڑھتی ہوئی عدم رواداری اور تشدد کے واقعات پر جماعت اسلامی ہند کی جانب سے منعقدہ دانشوروں کے اجلاس میں محمد فصیح الدین دعوۃ سیل نے تفصیل سے آج کے ملکی حالات کو واضح کیا اور ملک اور سماج میں پائی جانے والی بے چینی کی کیفیت کے سدباب کیلئے کوشش پر زور دیا ۔ اجلاس کو مخاطب کرتے ہوئے ایم کمار سوامی مقامی صدر انسانی حقوق کمیشن نے کہا کہ آج دنیا میں پائی جانے والی انسانی حقوق کی پامالی کا ذکر کیا اور کہا کہ ملک میں موجودہ حکومت نے انتخابات سے پہلے عوام کو خوش نما نعرے دیئے لیکن جب اقتدار حاصل ہوگیا تو ملک میں انتشار پھیلانے کے علاوہ کچھ کام نہ کیا اور انسانی حقوق کی آواز کو دبانے کی کوشش جاری ہے لیکن بہار کی عوام نے انہیں لگام لگادی ہے ۔  جے وی راجو کنوینر تلنگانہ جے اے سی نے کہا کہ جس طرح ملک کی آزادی کیلئے مسلمانوں اور ہندوؤں نے مل کر کام کیا پھر تلنگانہ کے حصول میں کامیاب رہے اسی طرح ہم کو مل کر کام کر کے ان حالات کو بدلنے کی ضرورت ہے ۔ ایلشورم انچارج ساہتیہ اکیڈیمی نے کہا ک یہ ملک ہم سب کا ہے اور سب کو رہنے اور ترقی کرنے کا حق ہے ۔ آج کی سیاست کو مذہب سے اوپر اُٹھ کر انسانیت کیلئے کام کرنا چاہیئے اور کہا کہ آج کے ملکی حالات کے پیش نظر جماعت اسلامی کا فکرمند ہونا اور سب کو ساتھ لیکر کام کرنے کا جذبہ قابل تعریف ہے ۔ وجئے آنند ‘ کنوینر تلنگانہ وکاس سمیتی نے کہا کہ آج دنیا کے جو حالات ہیں ان کے پیچھے عالمی طاقتیں کام کررہی ہیں اور اپنے مقاصد کے حصول کیئے ساری دنیا میں بے چینی کی کیفیت پیدا کردی ہے ۔ وجئے کمار گوڑ صدر بی سی سنگم نے کہا کہ آج ملک میں جو عدم رواداری ہے یہ صرف اقتدار کے حصول کیلئے ہے جبکہ دنیا کا کوئی مذہب تشدد کی تعلیم نہیں دیتا ۔ ملیا صدر ریتو سنگم نے کہا کہ سماج میں انتشار نابرابری کی وجہ سے ہوتا ہے اور آج کا سب سے بڑا دہشت گرد امریکہ ہے اور یہ طئے کرنا کہ عوام کو کیا کھانا چاہیئے کیا نہیں ۔ پیشنکر ایا اسٹیٹ ٹی آر ایس لیڈر نے کہا کہ دنیا میں آج جو حالات ہیں اس کی وجوہات پر عور کرنا ضروری ہے ۔ حالات قابل تشویش ہیں ۔ اس اجلاس کو اشوک راؤ چیرمین بزنس ‘ ایم کے آنند ‘ ساریہ ناستک سنگم ‘ سدا راجیا لیڈر ٹریڈ یونین نے مخاطب کیا ۔ پروگرام میں محمد سلیم الدین امیر مقامی ‘ محمد ربانی ‘ محمد تحسین ‘ محمد اسمعیل کے علاوہ کثیر تعداد میں معززین شہر موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT