Sunday , September 24 2017
Home / شہر کی خبریں / ملک کے 69 میڈیکل کالجس میں داخلوں پر پابندی

ملک کے 69 میڈیکل کالجس میں داخلوں پر پابندی

تلنگانہ و آندھرا پردیش کے 9 کالجس بھی شامل ، میڈیکل کونسل کا طلبہ کو چوکنا رہنے کا مشورہ
حیدرآباد۔27جولائی (سیاست نیوز) میڈیکل نشستوں پر داخلوں سے عین قبل میڈیکل کونسل آف انڈیا نے داخلہ کے خواہشمند طلبہ کو چوکنا رہنے کی تاکید کرتے ہوئے جس کالج میںداخلہ حاصل کر رہے ہیں ان کے موقف کے متعلق میڈیکل کونسل آف انڈیا کی ویب سائٹ پر معلومات حاصل کرنے کا مشورہ دیا ہے۔ ریاست تلنگانہ و آندھرا پردیش میں موجود 9میڈیکل کالجس کو میڈیکل کالجس میں داخلوں پر پابندی عائد کردی ہے جن میں تلنگانہ کے 5اور آندھرا پردیش کے 4میڈیکل کالجس شامل ہیں۔ میڈیکل کونسل آف انڈیا کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق ریاست تلنگانہ میں موجود ملا ریڈی میڈیکل کالج فار ویمن‘ مہاویر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس‘ ایس وی ایس میڈیکل کالج‘ میڈی سٹی انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس ‘ آر وی ایم انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس شامل ہیں جنہیں جاریہ سال داخلے حاصل کرنے کی اجازت نہیں دی گئی ہے اسی طرح ریاست آندھرا پردیش کے 4کالجس آر وی ایس انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس‘ نمرہ انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس ‘ گائیتری ودیا پریشد انسٹی ٹیوٹ آف ہیلت کئیر اینڈ میڈیکل ٹیکنالوجی ‘ اپولو انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس شامل ہیں جہاں داخلے نہیں دیئے جا سکیں گے۔میڈیکل کونسل آف انڈیا کے ذرائع کے مطابق ملک بھر میں 69میڈیکل کالجس میں داخلوں پر پابندی عائد کی گئی ہے اور ان کالجس میں داخلہ لینے والے طلبہ کو اپنی غلطی کے خود ذمہ دار قرار دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ اس سلسلہ میں جاری کردہ اطلاع کے مطابق ان 69کالجس میں جن میں داخلہ حاصل کرنے پر پابندی عائد کی گئی ہے ان میں مختلف خامیوں کی نشاندہی اور اصول و ضوابط کو پورا نہ کرنے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ کونسل کے عہدیداروں نے میڈیکل میں داخلہ کے خواہشمند طلبہ کو مشورہ دیا کہ وہ کونسلنگ سے قبل ان میڈیکل کالجس کے متعلق مکمل تفصیلات میڈیکل کونسل آف انڈیا کے منظورہ کالجس کی ویب سائٹ پر حاصل کرلیں تاکہ کسی قسم کی دشواریوں کا انہیں سامنا نہ کرنا پڑے۔ بتایاجاتا ہے کہ ایم سی آئی کی جانب سے کئے گئے اس اقدام کے متعلق کالجس کے ذمہ داران میں بھی بے چینی پائی جاتی ہے ہے کیونکہ آئندہ چند یوم کے دوران ہی پہلے اور دوسرے مرحلہ کی کونسلنگ کے علاوہ انتظامیہ کی نشستوں پر کونسلنگ کا عمل مکمل ہونے جا رہا ہے۔ اسی لئے کالجس کے ذمہ داران ان کالجس کے مستقبل کے متعلق فکرمند ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT