Monday , August 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / ممبئی میں کل ہندوستان۔جنوبی افریقہ فیصلہ کن ونڈے

ممبئی میں کل ہندوستان۔جنوبی افریقہ فیصلہ کن ونڈے

وانگھڈے اسٹیڈیم میں مہمان ٹیم پہلی کامیابی اور سیریز پر قبضہ کیلئے کوشاں
ممبئی ۔ 23 ۔ اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان رواں پانچ ونڈے مقابلوں کی سیریز کا فیصلہ کن مقابلہ اتوار کو ممبئی کے وانگھڈے اسٹیڈیم میں کھیلا جائے گا۔ جیسا کہ دونوں ہی ٹیموں نے سیریز میں فی کس دو فتوحات حاصل کرتے ہوئے ممبئی کے ونڈے کو اہمیت کا حامل بنادیا ہے۔ چینائی میں منعقدہ گزشتہ مقابلہ میں ہندوستانی ٹیم نے ویراٹ کوہلی کی شاندار سنچری اور اسپنرس کے بہتر مظاہروں کی بدولت کامیابی حاصل کرتے ہوئے ٹوئینٹی 20 سیریز میں ناکامی کے بعد ونڈے سیریز کو بھی ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔ ممبئی میں اتوار کو کھیلے جانے والے فیصلہ کن مقابلہ میں ریکارڈس ہندوستان کے حق میں کافی بہترین ہے جیسا کہ یہاں کھیلے گئے 16 مقابلوں میں ہندوستان نے 10 فتوحات حاصل کی ہیں اور اگر جنوبی افریقہ کے خلاف ہندوستان کے ریکارڈس دیکھے جائے  تو اس میں میزبان ٹیم کو یہاں صد فیصد شکست دی ہے۔ ہندوستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان یہاں تاحال تین مقابلے کھیلے گئے ہیں

اور تینوں مقابلوں میں ہندوستان نے کامیابی حاصل کی ہے۔ ہندوستان اور جنوبی افریقہ نے ممبئی کے وانگھڈے اسٹیڈیم میں آخری مرتبہ 10 سال قبل نومبر 2005 ء میں مقابلہ کیا تھا جس میں جنوبی افریقہ نے جیک کیلس کے شاندار 91 رنز کی بدولت 6 وکٹوں کے نقصان کے بعد 221 رنز اسکور کئے تھے۔ جوابی اننگز میں راہول ڈراویڈ نے 78 رنز کے اننگز کھیلی اور میزبان ٹیم نے 48 ویں اوور میں مطلوبہ نشانہ حاصل کرلیا تھا۔ رواں سیریز میں ہندوستان کیلئے شکھر دھون کا ناقص فارم تشویش کا باعث کیونکہ بائیں ہاتھ کے اوپنر مسلسل ناکام ہورہے ہیں جس کی وجہ سے ہندوستان کو بہتر شروعات نہیں مل رہی ہے۔ ان کے برعکس روہت شرما اپنی زندگی کے بہترین فارم میں چل رہے ہیں۔

سیریز کے دوران ویراٹ کوہلی اور سریش رائنا کے مظاہرے ابتدائی مقابلوں میں مایوس کن تھے لیکن چینائی ونڈے میں ویراٹ کوہلی نے شاندار سنچری بناتے ہوئے ٹیم کو سیریز برابر کرنے کا موقع فراہم کیا تو دوسری جانب کپتان مہیندر سنگھ دھونی کے اعتماد کو برقرار رکھتے ہوئے بائیں ہاتھ کے بیٹسمین سریش رائنا نے بھی نصف سنچری اسکور کی ہے ۔ چینائی ونڈے سے قبل رائنا نے تین مقابلوں میں دو مرتبہ صفر پر آؤٹ ہونے کے علاوہ صرف تین رنز بنائے تھے۔ بولنگ شعبہ میں فاسٹ بولر بھونیشور کمار کے مہنگے ثابت ہونے کا ہندوستان کو نقصان ہورہا ہے ۔ علاوہ ازیں ٹیم کے سینئر آف اسپنر ہربھجن سنگھ نے بھی چینائی ونڈے میں جہاں وکٹ اسپنرس کیلئے سازگار تھی ، وہاں 50 سے زائد رنز دیئے ۔

نیز اکشر پٹیل اور امیت مشرا کی بہتر بولنگ کی بدولت ہندوستان کو گزشتہ مقابلہ میں کامیابی حاصل ہوئی تھی۔ دوسری جانب میزبان جنوبی افریقی ٹیم کو سب سے بڑا نقصان اس کے اوپنر ہاشم آملہ کے ناقص مظاہروں سے ہورہا ہے۔ جیسا کہ ماضی میں آملہ ہندوستان کے خلاف جنوبی افریقہ کیلئے سب سے کامیاب ترین بیٹسمین بنے تھے لیکن رواں سیریز میں وہ ہنوز اپنی پہلی نصف سنچری کی تلاش میں ہے ۔افریقی ٹیم کے انتظامیہ کو امید ہے کہ ممبئی کے فیصلہ کن ونڈے میں آملہ ایک بہتر اننگز کھیلتے ہوئے ٹیم کی کامیابی میں اہم رول ادا کریں گے ۔ دوسرے اوپنر کوئنٹن ڈی کاک نے سیریز میں سنچری اسکور کرتے ہوئے فارم میں واپسی کا اعلان کیا ہے جبکہ مڈل آرڈر نے فاف ڈوپلیسی کے مظاہروں میں عدم استقلال سے ٹیم کو تشویش لاحق ہے۔ جیسا کہ ڈوپلیسی نے ابتدائی مقابلوں میں نصف سنچریاں اسکور کی تھی لیکن تیسرے اور چوتھے ونڈے میں وہ بہتر مظاہروں کو دہرا نہ سکے۔ اے بی ڈی ویلیئرس شاندار مظاہرے کر رہے ہیں اور ٹیم تنہا ان کے مظاہروں پر انحصار کر رہی ہے جس سے ہندوستانی ٹیم کو فائدہ ہورہا ہے کہ وہ حریف کپتان کو آؤٹ کرتے ہوئے کامیابی حاصل کریں ۔ بولنگ شعبہ میں فاسٹ بولر ڈیل اسٹین نے گزشتہ مقابلہ میں تین وکٹیں حاصل کرتے ہوئے امیدیں برقرار رکھی ہیں جبکہ زخمی ہوکر چوتھے ونڈے میں شرکت نہ کر نے والے مرنی مرکل  کے متعلق امید کی جارہی ہے کہ وہ اہم مقابلہ سے قبل مکمل صحت یاب ہوجائیں گے۔ مڈل آرڈر میں جے پی ڈومینی کے  زخمی ہوکر رواں سیریز سے باہر ہونے کے بعد ان کے مقام پر متبادل کھلاڑی کا انتخاب بھی ٹیم کیلئے اہم مسئلہ ہے۔

TOPPOPULARRECENT