Friday , September 22 2017
Home / Top Stories / منتخب ہونے پر امریکہ میں روزگار اور ملازمتیں واپس لاؤنگا ‘ ٹرمپ

منتخب ہونے پر امریکہ میں روزگار اور ملازمتیں واپس لاؤنگا ‘ ٹرمپ

چین ہمارا کاروبار ہڑپ رہا ہے ۔ پنسلوانیہ میں انتخابی دھاندلیوں سے متعلق اندیشوں کا اظہار ۔ ریپبلکین امیدوار کا انتخابی ریلی سے خطاب
ڈالاس ( امریکہ ) 13 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکہ میں ریپبلیکن صدارتی امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ نے آج کہا کہ وہ کئی سخت اقدامات اور معاشی پہل کے ذریعہ چین جیسے ممالک سے روزگار ‘ امریکہ کو واپس لائیں گے ۔ ٹرمپ نے پنسلوانیہ ( ایری ) میں جو ایک اہم ریاست سمجھی جارہی ہے ‘ ایک انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنی ملازمتیں پنسلوانیہ کو واپس لائیں گے ۔ ہم اپنی ملازمتیں امریکہ کو واپس لائیں گے ۔ ہم عوام کا روزگار واپس لائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ سارے امریکہ میں مختلف ریاستوں میں مینوفیکچرنگ اور ملازمتوں دونوں میں کمی آئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آپ دوسرے ممالک کا مشاہدہ کریں۔ وہ لوگ ہماری کمپنیاں ہتھیا رہے ہیں اور ہمارے روزگار چھین رہے ہیں۔ ٹرمپ نے حاضرین کی داد و تحسین کے دوران کہا کہ وہ کمپنیوں کو امریکہ میں برقرار رکھنے کی ذمہ داری خود نبھائیں گے ۔ انہوں نے ادعا کیا کہ امریکی عوام ڈیموکریٹک پارٹی کے قائدین کی جھوٹ سے تنگ آچکے ہیں۔ عوام اپنے روزگار اور ملازمتوں کے چھن جانے سے بیزار ہیں۔

عوام اپنی کمپنیوں کے بیرون ملک چلے جانے اور دوسرے مقامات پر قائم ہونے سے تنگ آچکے ہیں۔ وہ اس حقیقت سے بھی بیزار ہیں کہ چین ہر جگہ موجود ہوتا ہے اور وہ امریکی کمپنیوں کو کاروبار سے دور کرنے خود آگے بڑھ آتا ہے ۔ یہ سب کچھ بہت تیزی کے ساتھ ہو رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ فولاد کے شعبہ میں کام کرنے والے ان کے ساتھ ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ کانکنی کے شعبہ کے ملازمین ان کے ساتھ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ ملازم پیشہ افراد جیسے الیکٹریشن ‘ پلمبرس ‘ شیٹ راکٹرس ‘ کنکریٹ کا کام کرنے والے اور دوسرے بھی ان کے ساتھ ہیں۔ الٹونا میں ایک اور انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے ٹرمپ نے کہا کہ وہ اپنے حامیوں سے کہتے ہیں کہ وہ انتخابات کے دن پنسلوانیہ میں پولنگ بوتھس پر نظر رکھیں۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خیال میں ہم صرف ایک صورت میں شکست کھا سکتے ہیں اور وہ یہ ہے کہ پنسلوانیہ میں دھوکہ دہی ( بدعنوانی ) کا سلسلہ جاری رہے ۔

انہوں نے کہا کہ عوام کو دوسروں میں بھی دھاندلیوں کے تعلق سے شعور بیدارکرنے کی ضرورت ہے ۔ ٹرمپ نے اعادہ کیا کہ اگر وہ نومبر میں ہونے والے عام انتخابات میں کامیابی حاصل کرلیتے ہیں تو امریکہ کو دوبارہ معاشی اور فوجی طاقت بن کر ابھرنے میں مدد کرینگے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایسی قیادت نہیں کرینگے کہ ہم جو کچھ کر رہے ہیں اس پر ساری دنیا میں لوگ ہم پر ہنسیں۔ ہم اس بات کی اجازت نہیں دینگے کہ باہر سے لوگ آئیں اور جو کچھ ہمارے پاس ہے وہ لے جائیں۔ ہم کامیابی حاصل کرینگے ۔ ہم پہلے امریکہ کی بات کرینگے ۔ ہم امریکہ کو ایک بار پھر عظیم بنانے کی کوشش کرینگے ۔ یہ بہت جلد ہونے والا ہے ۔ وہ ایسے صدر نہیں بنیں گے جو صرف یہ سوال کرے کہ ’ کیا یہ سب ٹھیک ہے ‘ ؟ ۔ وہ ایسا نہیں چاہتے ۔ ہم کو آئی ایس آئی ایس سے نمٹنا ہے ۔ ہم کو چین سے نمٹنا ہے ۔ ہم کو کئی افراد سے نمٹنا ہے ۔ یہ سب کچھ مختصر انداز میں نہیں ہوسکتا ۔

علاوہ ازیں ٹرمپ کی انتخابی مہم کے ذمہ داروں نے مخالف امیدوار ہیلاری کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ امریکی عوام ان ہزاروں ای میلس کو دیکھنا چاہتے ہیں جو ہیلاری نے حذف کردئے تھے تاکہ حکام کو کرپٹ اسکیم سے واقفیت حاصل کرنے سے روکا جائے ۔ انہوں نے اپنے ٹیکس ریٹرنس بھی جاری نہیں کئے تھے ۔ ٹرمپ نے ادعا کیا کہ ہیلاری نے صرف وہ ریکارڈ ظاہر کیا ہے جو کوئی بھی دیکھنا نہیں چاہتا ۔ امریکی عوام ان 33,000 ای میلس کو دیکھنا چاہتے ہیں جو ایف بی آئی تحقیقات سے بچنے کیلئے حذف کردئے گئے تھے ۔ واضح رہے کہ ہیلاری نے آج ہی اپنے تازہ ترین ٹیکس ریٹرنس جاری کئے تھے ۔ انہوں نے اپنے شوہر بل کلنٹن کے ٹیکس ریٹرنس بھی داخل کردئے ۔ اس کے چند گھنٹوں میں ٹرمپ کی مہم کے ذمہ داروں نے ان پر یہ الزام عائد کیا ۔ ہیلاری کے ریٹرنس میں ادعا کیا گیا ہے کہ انہوںنے 2015 میں 34.2 فیصد تک مختلف ٹیکسیس ادا کئے ہیں ۔ ان میں مقامی محاصل بھی شامل ہیں۔

TOPPOPULARRECENT