Wednesday , September 20 2017
Home / ہندوستان / منسوخ کرنسی کیلئے کاؤنٹنگ مشین استعمال کرنے کی تردید

منسوخ کرنسی کیلئے کاؤنٹنگ مشین استعمال کرنے کی تردید

آر ٹی آئی سوال پر ریزرو بینک کا جواب ، متعینہ عملہ کی تفصیل بتانے سے بھی انکار
نئی دہلی۔ 10 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) ریزرو بینک آف انڈیا نے کہا ہے کہ 500 اور 1000 کی منسوخ شدہ کرنسی کی گنتی کیلئے کسی بھی آفس میں کاؤنٹنگ مشین استعمال نہیں کی جارہی ہے۔ آر ٹی آئی جواب میں بینک نے یہ بات بتائی اور منسوخ شدہ نوٹوں کی گنتی کیلئے متعین عملہ کی جملہ تعداد بتانے سے بھی انکار کیا ہے۔ بینک نے کہا کہ اس طرح کی معلومات یکجا کرنے سے اس کے وسائل کے بارے میں توجہ بٹ جائے گی۔ ریزرو بینک نے 30 اگست کو جاری کردہ سالانہ رپورٹ برائے 2016-17ء میں کہا تھا کہ 15.28 لاکھ کروڑ یا 99% منسوخ شدہ 500 اور 1000 روپئے کے نوٹس بینکنگ سسٹم میں واپس آچکے ہیں۔ سنٹرل بینک کی یہ رپورٹ 30 جون 2017ء کے ختم تک کیلئے تھی، اس میں یہ بھی کہا گیا کہ 15.44 لاکھ کروڑ روپئے کی منسوخ شدہ کرنسی کے منجملہ صرف 16.050 کروڑ روپئے واپس نہیں کئے گئے ہیں۔ وزیراعظم نریندر مودی نے 8 نومبر 2016ء کو نوٹ بندی کا اعلان کیا تھا۔ اس وقت 1,716.5 کروڑ روپئے 500 روپئے کی کرنسی اور 685.8 کروڑ روپئے 1000 روپئے نوٹ کی شکل میں بازار میں زیرگشت تھی۔ یہ جملہ رقم 15.44 لاکھ کروڑ روپئے ہوتی ہے۔ آر بی آئی نے 10 اگست کے آر ٹی آئی جواب میں بتایا کہ ریزرو بینک آف انڈیا کے کسی بھی دفتر میں اس رقم کی گنتی کیلئے کاؤنٹنگ مشین استعمال نہیں کئے جارہے ہیں۔ سنٹرل بینک نے یہ بھی کہا ہے کہ جملہ تعداد کا پتہ چلانے کے مقصد سے کاؤنٹنگ مشینس لیز پر حاصل نہیں کئے گئے۔آر ٹی آئی کے تحت 500 اور 1000 روپئے کی منسوخ شدہ کرنسی کو گننے کے مقصد سے استعمال کئے جارہے کاؤنٹنگ مشینس کی تفصیلات طلب کی گئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT