Tuesday , October 24 2017
Home / Top Stories / مودی سے نواز شریف کی ٹیلیفون پر بات چیت، تعاون کا عہد

مودی سے نواز شریف کی ٹیلیفون پر بات چیت، تعاون کا عہد

دہشت گردوں کیخلاف بروقت و فیصلہ کن کارروائی کی جائے گی، وزیراعظم کو پاکستانی ہم منصب کا تیقن
نئی دہلی 5 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) پٹھان کورٹ دہشت گرد حملہ سے اگرچہ پاکستان کا تعلق واضح ہوچکا ہے۔ اس دوران پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف نے آج اپنے ہندوستانی ہم منصب نریندر مودی سے ٹیلیفون پر بات چیت کی اور اس حملہ میں ملوث دہشت گردوں کے خلاف ’’بروقت اور فیصلہ کن‘‘ کارروائی کا عہد کیا۔ ہندوستان کی جانب سے دہشت گردوں کے بارے میں واضح اور قابل کارروائی معلومات پاکستان کو فراہم کی گئی ہیں۔ وزیراعظم مودی نے نواز شریف سے ٹیلیفون پر بات چیت کے دوران اس حملہ کے ذمہ داروں کے خلاف فی الفور کارروائی کے لئے پرزور اصرار کیا۔ واضح رہے کہ ہفتہ کو 6 دہشت گردوں نے پٹھان کوٹ میں واقع انڈین ایر فورس کے اڈے میں گھس کر بڑے پیمانے پر حملہ کیا تھا اور انکاؤنٹر کے دوران بشمول ایک لیفٹننٹ کرنل 7 سکیوریٹی اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ پاکستان کے وزیراعظم کا ٹیلی فون کال مودی کو آج دوپہر موصول ہوا تھا۔ وزیراعظم کے دفتر (پی ایم او) نے کہاکہ دوران مذاکرات پٹھان کوٹ دہشت گرد حملہ پر بات چیت کی گئی۔ پی ایم او نے اپنے ایک بیان میں کہاکہ ’’وزیراعظم نے پٹھان کوٹ دہشت گرد حملہ کے ذمہ داروں اور اس سے تعلق رکھنے والے تمام افراد اور تنظیموں کے خلاف فی الفور اور سخت ترین کارروائی کی ضرورت پر پوری شدت کے ساتھ زور دیا‘‘۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’اس ضمن میں واضح اور قابل کارروائی معلومات پاکستان کو فراہم کی گئی ہیں۔ نواز شریف نے وزیراعظم مودی کو تیقن دیا کہ اُن کی حکومت دہشت گردوں کے خلاف فوری اور فیصلہ کن کارروائی کرے گی۔ نواز شریف کا کال ایک ایسے وقت موصول ہوا جب اس دہشت گرد حملہ سے پاکستان کا تعلق واضح ہوچکا ہے۔ قومی تحقیقاتی ادارہ این آئی اے کے سربراہ شرد کمار نے آج کہاکہ اس بات پر شائد ہی کوئی شبہ کیا جاسکتا ہے کہ حملہ آوروں کا تعلق پاکستان سے ہے۔ وزیر دفاع منوہر پاریکر نے کہاکہ اس بات کے اشارے ملے ہیں کہ دہشت گردوں کی طرف سے استعمال کردہ بعض آلات پاکستانی ساختہ تھے۔ قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول نے پاکستانی حملہ آوروں کی طرف سے استعمال کردہ موبائیل نمبرس کے علاوہ دیگر معلومات فراہم کئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق حملہ آوروں نے اپنی کارروائی کے دوران کئی مرتبہ پاکستان کو کال کیا تھا جن میں چند کال مختصر اور دیگر طویل وقت تک جاری رہے۔ پاکستانی وزارت خارجہ نے کل رات کہا تھا کہ وہ دہشت گرد حملہ کے بارے میں ہندوستان کی طرف سے فراہم کی جانے والی معلومات پر کام کررہا ہے۔ پاکستانی وزارت خارجہ نے ’’دہشت گردی کے بدبختانہ واقعہ ‘‘ کی سخت مذمت کرتے ہوئے ہندوستان کے عوام اور حکومت سے گہری تعزیت کا اظہار کیا اور کہاکہ ہم غمزدہ خاندانوں کا درد سمجھ سکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT