Tuesday , September 26 2017
Home / سیاسیات / مودی سے2019 میںتنہا انتخابی مقابلہ مشکل ، اپوزیشن کا اعتراف

مودی سے2019 میںتنہا انتخابی مقابلہ مشکل ، اپوزیشن کا اعتراف

اترپردیش میں کانگریس، سماج وادی پارٹی، بی ایس پی اور آر ایل ڈی و دیگر کے عظیم اتحاد کی باتیں
لکھنؤ17 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش اسمبلی انتخابات میں شکست خوردہ اپوزیشن نے اعتراف کرلیا ہے کہ 2019ء کے لوک سبھا انتخابات میں نریندر مودی سے اکیلے نمٹنا مشکل ہوگا، اس لئے عظیم اتحاد کی باتیں ہونے لگی ہیں ۔کانگریس کے ایک سینئر لیڈر نے کہا کہ مودی کی آندھی کو روکنے کے لئے کانگریس، سماج وادی پارٹی (ایس پی)، بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) اور راشٹریہ لوک دل (آر ایل ڈی) کو ایک پلیٹ فارم پر آجانا چاہئے جبکہ آر ایل ڈی کے ریاستی صدر ڈاکٹر مسعود کہتے ہیں کہ مودی کے خلاف 2019ء میں اکیلے لڑنے پر اپوزیشن کو نقصان اُٹھانا پڑسکتا ہے۔ لالو پرساد یادو کی راشٹریہ جنتا دل (آر جے ڈی) بھی اس ضمن میں اتفاق رکھتی ہے ۔ آر جے ڈی کے اشوک سنگھ کہتے ہیں کہ اپوزیشن پارٹیوں کو ایک پلیٹ فارم پر آکر مودی کو کرارا جواب دینا چاہئے ۔ کانگریس لیڈر راجندر پرتاپ سنگھ نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات میں غیر بی جے پی پارٹیوں کو ایک ساتھ مل کر لڑنا چاہئے تاکہ مودی کی لہر کو روکا جا سکے ۔راجندر سنگھ نے کہا کہ بی جے پی کو شکست دینے کے لئے کانگریس کی قیادت کو عظیم اتحاد کی پہل کرنی چاہئے اور اس کے لئے سماج وادی پارٹی کے صدر اکھلیش یادو، بی ایس پی کی صدر مایاوتی، آر ایل ڈی صدر چودھری اجیت سنگھ سمیت دیگر چھوٹی پارٹیوں کو بھی ایک پلیٹ فارم پر لا کر انتخابات لڑنے کی حکمت عملی بنانی چاہئے ۔سماج وادی پارٹی کے ڈاکٹر راکیش کہتے ہیں کہ ان کی پارٹی بی جے پی سے اکیلے لڑنے کے قابل ہے لیکن اگر عظیم اتحاد بن جائے تو کوئی برائی نہیں ہے ۔ ان کا دعویٰ ہے کہ ہارنے کے باوجود اترپردیش میں سماج وادی پارٹی کو ووٹ کافی ملے ہیں۔ اتر پردیش اسمبلی کی 160 سے زیادہ ایسی نشستیں ہیں جہاں ایس پی دوسرے نمبر پر رہی ہے ۔ اس سب کے باوجود بی جے پی کو روکنے کے لئے اتحادبن جائے تو کوئی برائی نہیں ہے ۔اتر پردیش اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کو39.7 فیصد، بی ایس پی کو 22.2 ، ایس پی کو 21.8 اور کانگریس کو 6.2 فیصد ووٹ ملے ہیں۔ تینوں پارٹیوں کے ووٹ کا تناسب 50.2ہے ، جو بی جے پی کے ووٹوں سے قریب 11فیصد زیادہ ہے ۔کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کے سوریہ کانت پانڈے بھی موجودہ سیاسی ماحول میں عظیم اتحاد کو ضروری قرار دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ بی جے پی کو 2019 میں اقتدار میں آنے سے روکنے کے لئے اس کے سوائے کوئی دوسرا راستہ ہی نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT