Tuesday , August 22 2017
Home / سیاسیات / مودی نے ہندووں و مسلمانوں کو تقسیم کیا ‘ ملک میں برہمی پیدا کی

مودی نے ہندووں و مسلمانوں کو تقسیم کیا ‘ ملک میں برہمی پیدا کی

ایک وعدہ بھی پورا کرنے میں ناکام ۔ ملک میں طلبا کی آواز کو کچلا جا رہا ہے ۔ کیرالا میں جنا رکشنا یاترا کے اختتام پر راہول گاندھی کا خطاب
تھرواننتا پورم 9 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی نے آج نریندر مودی حکومت پر تنقید کی اور اس پر الزام عائد کیا کہ وہ مخالف کسان ‘ مخالف مزدور ‘ مخالف طلبا اور مخالف غریب ہے ۔ انہوں نے بائیں بازو محاذ کے نظریہ کو بھی متروک اور ناقابل عمل قرار دیا ۔ راہول گاندھی نے جنا رکشا یاترا کے اختتام پر کانگریس ورکرس سے خطاب کرتے ہوئے مودی حکومت پر کئی بار تنقید کی ۔ انہوں نے یہاں تقریبا نصف گھنٹہ خطاب کیا ۔ اس یاترا کو کیرالا میں کانگریس کی انتخابی مہم کا عملا آغاز سمجھا جا رہا ہے ۔ راہول گاندھی نے کاسر گوڈ ۔ تھرو اننتا پورم مارچ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کبھی وزیر اعظم ہند کو کسانوں یا مزدوروں کے ساتھ نہیں دیکھیں گے ۔ کبھی بھی وزیر اعظم نے کسانوں یا مزدوروں کے ساتھ ہاتھ ملاتے ہوئے تصویر کشی نہیںکروائی ہے ۔ انہوں نے مودی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وہ 2014 کے انتخابات میں سماج کے مختلف طبقات میں برہمی کا نعرہ دیتے ہوئے اقتدار پر آئے تھے ۔ انہوں نے ہندووں اور مسلمانوں کو تقسیم کیا اور ملک میں برہمی پیدا کی تھی ۔ انہوں نے کیرالا میں سی پی ایم زیر قیادت ایل ڈی ایف اپوزیشن پر بھی تنقید کی اور کہا کہ بائیں بازو کی جماعتیں جن نظریات میں یقین رکھتی ہیں وہ اب متروک ہوگئے ہیں اور سابقہ صدی سے تعلق رکھتے ہیں۔ ’’ کیرالا اپنا مستقبل گذشتہ صدی کے نظریات کی بنیاد پر تعمیر نہیں کرسکتا ‘‘ ۔ سولار اسکام اور بار رشوت اسکامس کا حوالہ دئے بغیر راہول نے یہ واضح کیا کہ کانگریس پارٹی کرپشن پر کوئی سمجھوتہ نہیں کریگی ۔ اور وہ یہ واضح کرنا چاہتے ہیں کہ اگر کوئی معمولی سا بھی ثبوت دستیاب ہو تو کانگریس پارٹی سخت کارروائی کریگی ۔

انہوں نے یو ڈی ایف حکومت کی پانچ سالہ معیاد کے کاموں کی ستائش کی ۔ انہوں نے کہا کہ وہ خوش ہیں کہ چیف منسٹر اومن چنڈی نے وعدوں کے مطابق کئی کام کئے ہیں۔ حکومت کو نشانہ بنائے جانے پر سی پی ایم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے گاندھی نے کہا کہ ایل ڈی ایف ریاست کے عوام سے اپنی شراب پالیسی واضح کرے ۔ انہوں نے کہا کہ وہ ریاست میں ایل ڈی ایف سے ایک سوال پوچھنا چاہتے ہیں کہ آیا وہ یہاں مزید شراب کے بار کھولیں گے یا نہیں بند کردیا جائیگا ۔ مودی پر دوبارہ تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مودی نے ملک کے نوجوانوں سے زبردست وعدے کئے تھے لیکن وہ اپنے وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام ہوگئے ۔ انہوں نے ملک کے ہر خاندان کے بینک اکاؤنٹ میں 15 لاکھ روپئے منتقل کرنے اور کسانوں کو واجبی قیمتیں ادا کرنے کے وعدوں کا تذکرہ کیا اور کہا کہ جیسے ہی انہیں اقتدار حاصل ہوا مودی اپنے وعدوں کو فراموش کرگئے ہیں۔ اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کا تذکرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دال کی قیمتیں 200 روپئے فی کیلو تک پہونچ گئی ہیں اور دوسری اشیا کی قیمتیں بھی آسمان کو چھونے لگی ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ این ڈی اے حکومت نے عوام کو ایک روپئے تک کا فائدہ نہیں پہونچایا جبکہ اسے بین الاقوامی مارکٹ میں تیل کی قیمتوں میں بھاری گراوٹ سے زبردست فائدہ ہوا ہے ۔ ملک میں کسانوں کو نظر انداز کیا جا رہا ہے اور وہ خود کشی کر رہے ہیں۔ چاہے یہ ربر ہو ‘ ناریل ہو ‘ الائچی کے کسان ہوں یا ملک کی دوسری ریاستوں کے کسان ہوں ‘ انہیں اپنا مستقبل تاریک نظر آ رہا ہے ۔ انہوں نے این ڈی اے حکومت پر سابقہ یو پی اے حکومت کے بڑے فلاحی پروگراموں کو تباہ کرنے کا الزام عائد کیا ۔ راہول نے حیدرآباد یونیورسٹی میںدلت اسکالر روہت ریمولہ کی خود کشی کا تذکرہ بھی کیا اور کہا کہ یہ مسئلہ کسی ایک ذات کا نہیں بلکہ طلبا کی آواز کو کچلنے کا مسئلہ ہے ۔ انہوں نے مرکزی وزیر سمرتی ایرانی کے اس ریمارک پر بات کہی کہ روہت دلت نہیں تھا ۔ انہوں نے کہا کہ اصل مسئلہ ذات کا نہیں ہے بلکہ ایک ہندوستانی طالب علم کو کچل دیا گیا ۔ اسے وہ بات کہنے اور کرنے کی اجازت نہیں دی گئی جس میں وہ یقین رکھتا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ہند کا یہ کام نہیں ہے کہ وہ طلبا کے مطالبات کو کچل دے ۔

TOPPOPULARRECENT