Wednesday , September 20 2017
Home / شہر کی خبریں / مکہ مدینہ علاء الدین ٹرسٹ کی ملگیات وقف بورڈ کی نگرانی میں رکھنے کی تائید

مکہ مدینہ علاء الدین ٹرسٹ کی ملگیات وقف بورڈ کی نگرانی میں رکھنے کی تائید

سابق متولی کی اپیل مسترد ، حیدرآباد ہائی کورٹ کا فیصلہ
حیدرآباد۔8 ستمبر (سیاست نیوز) حیدرآباد ہائی کورٹ نے مکہ مدینہ علاء الدین ٹرسٹ کے سابق متولی کی جانب سے دائر کردہ اپیل کو مسترد کردیا اور ٹرسٹ کی ملگیات کو وقف بورڈ کی راست نگرانی میں رکھنے کے فیصلے کی تائید کی۔ وقف بورڈ نے متولی کو 2012ء میں مختلف بے قاعدگیوں کے الزامات کے تحت علیحدہ کردیا تھا اور انہوں نے اس فیصلے کو ٹربیونل میں چیلنج کیا۔ 5 برس کا عرصہ گزرنے کے بعد متولی نے ہائی کورٹ میں درخواست داخل کی اور استدلال پیش کیا کہ وقف بورڈ کسی بھی ادارہ کو 5 سال سے زائد تک اپنی راست نگرانی میں نہیں رکھ سکتا۔ لہٰذا انہیں بلدیات کے کرایہ جات حاصل کرنے کا اختیار حاصل ہے۔ متولی نے سنگل جج کے حالیہ فیصلے کو چیلنج کیا جس میں ملگیات کے کرائے وقف بورڈ کی جانب سے وصول کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔ جسٹس راما سبرامنیم اور جسٹس رجنی پر مشتمل ڈیویژن بنچ نے آج فریقین کی سماعت کے بعد سابق متولی کی رٹ درخواست کو نامنظور کردیا۔ اس طرح وقف بورڈ کو مکہ مدینہ علاء الدین وقف کے کرایہ جات وصول کرنے کی اجازت برقرار رکھی گئی ہے۔ وقف بورڈ کے اسٹینڈنگ کونسل ایم اے مجیب نے پیروی کی۔ واضح رہے کہ وقف بورڈ میں حالیہ عرصہ میں مکہ مدینہ علاء الدین وقف کے 500 کرایہ داروں کو نوٹس جاری کی ہے جس میں انہیں اضافہ شدہ کرایہ معہ بقایاجات ادا کرنے کی ہدایت دی گئی۔ بصورت دیگر ان کے خلاف تخلیہ کی کارروائی شروع کی جائے گی۔ وقف بورڈ نے آمدنی میں اضافہ کے لیے شہر کی اہم اوقافی جائیدادوں مکہ مدینہ علاء الدین وقف اور نبی خانہ مولوی اکبر کی ملگیات کے کرایہ جات میں اضافہ کیا ہے۔ بیشتر کرایہ داروں نے اضافہ شدہ کرائے ادا کرنے سے اتفاق کرلیا تاہم دیگر کرایہ دار متولی کے موقف کے ساتھ ہیں۔

TOPPOPULARRECENT