Sunday , September 24 2017
Home / سیاسیات / مہاراشٹرا اسمبلی عمارت کی سیڑھیوں پر اپوزیشن کا دھرنا

مہاراشٹرا اسمبلی عمارت کی سیڑھیوں پر اپوزیشن کا دھرنا

حکومت پر کسانوں کی مشکلات نظرانداز کردینے کا الزام
ممبئی۔/10مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) متحدہ اپوزیشن نے آج ریاست میں خشک سالی سے نمٹنے حکومت مہاراشٹرا کی ناکامی اور بعض وزراء پر بے قاعدگیوں کے الزامات کے خلاف ودھان سبھا ( اسمبلی ) کی سیڑھیوں پر بیٹھ کر احتجاج کیا جس میں سرکردہ قائدین بشمول سابق ڈپٹی چیف منسٹر اجیت پوار، سابق وزراء شامل تھے۔ اس موقع پر این سی پی کے بعض ارکان اسمبلی نے دیویندر فڈنویس حکومت کا علامتی ارتھی جلوس نکالا۔ احتجاجیوں نے اپنے ہاتھوں میں بیانرس اور پلے کارڈس اٹھا رکھے تھے جس میں خشک سالی سے متاثرہ علاقوں میں زرعی قرضوں کی معافی اور فی الفور امداد کی فراہمی کا مطالبہ کیا گیا۔ علاوہ ازیں بعض بیانرس پر ریاستی وزیر تعلیم ونود نواڈے سے استعفی کا مطالبہ بھی تحریر تھا، جن پر وزراء کیلئے وضع کردہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی الزام ہے۔ قانون ساز کونسل میں اپوزیشن لیڈر دھنجے منڈسے نے کہا کہ بجٹ اجلاس میں یہ مطالبات مسلسل اٹھائے جائیں گے جبکہ خشک سالی، امن و قانون کی صورتحال، میک اِن انڈیا، پروگرام کی ناکامی کو اجاگر کیا جائیگا۔ ریاستی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر رادھا کرشنا پاٹل نے بتایا کہ خشک سالی سے نمٹنے میں دیویندر فڈنویس حکومت ناکام ہوگئی ہے جبکہ شمالی مہاراشٹرا، مرہٹواڑہ اور ودربھا کے بیشتر علاقوں میں غیرموسمی بارش اور ژالہ باری سے کھڑی فصلوں کو نقصان پہنچاہے۔واضح رہے کہ مہاراشٹرا اسمبلی کا بجٹ اجلاس ریاستی گورنر کے خطاب کے ساتھ کل یہاں شروع ہوگیا جبکہ 18مارچ کو بجٹ پیش کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT