Wednesday , June 28 2017
Home / Top Stories / میٹرو ریل پراجکٹ کا منصوبہ ہم نے ہی پیش کیا، تلنگانہ کے پہلے مہا ناڈو سے چندرا بابو نائیڈو کا خطاب

میٹرو ریل پراجکٹ کا منصوبہ ہم نے ہی پیش کیا، تلنگانہ کے پہلے مہا ناڈو سے چندرا بابو نائیڈو کا خطاب

 

حیدرآباد۔24مئی (سیاست نیوز) حیدرآباد کی ترقی تلگو دیشم پارٹی کے دور اقتدار کی مرہون منت ہے اور تلنگانہ میں سب سے زیادہ اہمیت کے حامل علاقہ حیدرآباد اور اطراف کے نواحی علاقہ سائبر آباد‘ گچی باؤلی‘ رائے درگ‘ میڑچل‘ ایل بی نگر ‘ حیات نگر اور مہیشورم ہیں اور ان علاقوں کی ترقی تلگودیشم دور حکومت میں ہی ہوئی تھی۔ ریاست آندھراپردیش کی تقسیم سے قبل تلگودیشم پارٹی نے تلنگانہ کے علاقوں کوعالمی نقشہ میں نمایاں کرنے میں کلیدی کردار ادا کیا اور آج تلگو دیشم پارٹی پڑوسی تلگو ریاست آندھراپردیش میں وہی تاریخ دہرانے جا رہی ہے۔ صدر تلگودیشم پارٹی و چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے تقسیم ریاست کے بعد تلنگانہ میں منعقدہ پہلے مہاناڈو سے خطاب کے دوران ان خیالات کا اظہار کیا۔ مسٹر این چندرا بابو نائیڈو کے خطاب کے دوران تلگو دیشم پارٹی کارکنوں اور قائدین میں زبردست جوش و خروش دیکھا گیا۔ مسٹر نائیڈو نے اپنے خطاب کے دوران کہا کہ حیدرآباد کو ٹکنالوجی کے مرکز میں تبدیل کرنے اور حیدرآباد کو عالمی افق پر نمایاں اہمیت کے حامل شہرو ںمیں شامل کرنے کیلئے سڑکوں کی توسیع‘ صفائی ‘ فلائی اوور برجس کی تعمیر اور حیدرآباد میٹرو ریل کا منصوبہ تلگو دیشم حکومت کا تھا اور تلگو دیشم نے اپنے دور اقتدار میں حیدرآباد میں فلائی اوورس کی تعمیر اور سڑکوں کی توسیع جیسے اقدامات کئے ساتھ ہی میٹرو ریل پراجکٹ کو روشناس کروایا لیکن اب تک بھی حکومتیں حیدرآباد میٹرو ریل کے پراجکٹ کو مکمل نہیں کر پائی ہیں۔ انہوںنے تلگو دیشم قائدین و کارکنوں کو مشورہ دیا کہ وہ عوام کے درمیان رہتے ہوئے عوام کو حکومت کی ناکامیوں اور تلگو دیشم کے دور اقتدار میں ہوئی ترقی کے متعلق واقف کروائیں ۔ چیف منسٹر آندھرا پردیش نے کہا کہ شہر حیدرآباد کو جس طرح تلگو دیشم پارٹی نے اپنے دور اقتدار میں ترقی فراہم کی ہے اسی طرح ریاست آندھرا پردیش کی ترقی میں ان کی حکومت شب و روز مصروف ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وہ تلنگانہ میں بھی تلگو دیشم کے استحکام کے لئے سنجیدہ حکمت عملی اختیار کر رہے ہیں ۔ انہوںنے بتایا کہ تلگودیشم پارٹی کا تلنگانہ میں انتہائی طاقتور موقف ہے اور تلنگانہ عوام نے تلگودیشم امیدواروں کو کامیاب بھی بنایا لیکن جو حالات پیدا کئے گئے اس سے عوام اچھی طرح واقف ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست تلنگانہ میں موجودہ حالات میں بھی تلگودیشم پارٹی کے کارکن پارٹی کی ریڑھ کی ہڈی ہیں اور وہ پارٹی کے استحکام میں کلیدی کردار ادا کر رہے ہیں۔ مسٹر نائیڈو نے کارکنوں کو تیقن دیا کہ وہ تلنگانہ میں بھی اپنی سرگرمیوں میں اضافہ کریں گے اور پارٹی کی سرگرمیوں کا جائزہ لیتے رہیں گے۔ صدر تلگودیشم پارٹی نے کہا کہ ریاست تلنگانہ میں تلگودیشم کو بھرپور عوامی تائید حاصل ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آندھرا پردیش کی ترقی کے ساتھ ساتھ تلنگانہ کی ترقی کی منصوبہ بندی و حکمت عملی بھی پارٹی کی جانب سے تیار کی جا رہی ہے ۔

مہاناڈو اجلاس سے مسٹر ایل رمنا‘ مسٹر ای پدی ریڈی‘ مسٹر ریونت ریڈی ‘ جناب علی بن ابراہیم بن عبداللہ مسقطی کے علاوہ دیگر قائدین نے مخاطب کیا اور تلنگانہ راشٹر سمیتی حکومت کے طر ز کارکردگی کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکومت ہر محاذ پر ناکام ہو چکی ہے ۔ مسٹر ایل رمنا نے ریاستی حکومت پر الزام عائد کیا کہ ریاستی حکومت جمہوری طرز حکمرانی کے بجائے من مانی کر رہی ہے اور عوام کے حقوق کو سلب کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاستی حکومت اپنے خلاف کوئی بات سننے تیار نہیں ہے اور اپوزیشن کے کردار کو مسخ کرنے کی ناپاک سازشو ںمیں مصروف ہے۔ مسٹر ایل رمنانے کہا کہ ریاستی حکومت نے حصول اقتدار سے قبل عوام سے جو وعدے کئے تھے ان میں کوئی وعدہ پورا نہیں کیا گیا بلکہ صرف اعلانات کے ذریعہ عوام کو گمراہ کیا جا رہا ہے ۔مسٹر ریونت ریڈی نے ریاستی حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکومت تلگو دیشم پارٹی کی عوامی مقبولیت اور پارٹی کیڈر سے خوفزدہ ہے اسی لئے پارٹی کیڈر کو عدم استحکام کا شکار بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے لیکن تلگودیشم پارٹی کارکن آنجہانی این ٹی راما راؤ کے اصولوں پر گامزن ہیں اور ان اصولوں سے انحراف نہیں کر سکتے اس بات کا اندازہ خود چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ کو بخوبی ہے۔ جناب علی مسقطی نے بتایا کہ اس بات سے کوئی انکار نہیں کرسکتا کہ صدر تلگودیشم مسٹر این چندرابابو ناءyڈو ایک دور اندیش اور اصلاحات پسند قائد ہیں اوران کی قیاد ت میں پارٹی طویل سفر طئے کر چکی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ شہر حیدرآباد کی مجموعی ترقی اور حیدرآباد کو ملک کے صاف ستھرے شہرو ںمیں سب سے پہلے تلگودیشم پارٹی کے دور حکومت میں شامل کیا گیا۔ انہوںنے بتایاکہ مستقبل میں بھی تلگودیشم پارٹی بہترین مظاہرہ کی حکمت عملی تیار کررہی ہے ۔ جناب علی مسقطی نے کہا کہ متحدہ ریاست میں عوام کے درمیان مذہبی منافرت کے خاتمہ میں تلگودیشم پارٹی نے اہم رول ادا کیا تھا جس کے سبب آج بھی تلنگانہ میں گنگا جمنی تہذیب برقرار ہے اور اس فرقہ وارانہ یکجہتی کی برقراری کے لئے تلگودیشم پارٹی اپنی سرگرمیاں جاری رکھے گی۔نمائش میدان میں منعقد کئے گئے مہاناڈو اجلاس میں ہزاروں کی تعداد میں تلگودیشم کارکنوں نے شرکت کی اور قائدین نے اپنے خطاب کے دوران بتایا کہ این ٹی راما راؤ کے دور حکومت میں ہی پٹیل پٹواری نظام کے خاتمہ کو ممکن بنایاگیا تھا۔
یہ بات انتہائی تشویشناک ہے کہ آریہ سماج نے مسلم لڑکی کی عمر کے صداقتنامہ کے بغیر ہی رتناکر سے شادی کروادی اور اس سلسلہ میں ایک میریج سرٹیفکیٹ بھی جاری کیا۔ سب انسپکٹر ملک پیٹ مسٹر سی ایچ سرینواس ریڈی نے بتایا کہ رتناکر کے خلاف صرف اغوا کے کیس کے تحت اسے جیل بھیجاگیا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT