Friday , August 18 2017
Home / سیاسیات / میں نے صرف کینسر کی ایک مریضہ کی مدد کی ہے : سشما

میں نے صرف کینسر کی ایک مریضہ کی مدد کی ہے : سشما

للت مودی مسئلہ پر وزیر خارجہ کا اپوزیشن سے عاری لوک سبھا میں جذباتی بیان

نئی دہلی 6 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) للت مودی مسئلہ پر اپوزیشن کی تنقیدوں کا سامنا کر رہیں وزیر خارجہ سشما سوراج نے آج لوک سبھا میں ایک جذباتی بیان دیا اور کہا کہ انہوں نے للت مودی کی کوئی مدد نہیں کی ہے بلکہ ان کی کینسر کا شکار اہلیہ کی مدد کی ہے ۔ انہوں نے سوال کیا کہ اگر سونیا گاندھی ان کی جگہ ہوتیں تو کیا وہ اس خاتون کی مدد نہیں کرتیں ؟ ۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ انہوں نے حکومت برطانیہ سے للت مودی کو سفری دستاویزات جاری کرنے سے متعلق کوئی سفارش نہیں کی تھی تاہم انہوں نے اس پر فیصلہ کا اختیار برطانیہ کو سونپ دیا تھا ۔ سشما سوراج کو کابینہ سے بیدخل کرنے کیلئے اپوزیشن کی جانب سے مطالبہ کیا جا رہا ہے اور اس پر پارلیمنٹ تعطل کا شکار ہے ۔ انہوں نے ایوان میں آج بیان دیتے ہوئے کہا کہ انہیں افسوس ہے کہ اپوزیشن میں ان کے کچھ دوست انہیں نشانہ بنا رہے ہیں اور وہ اس مسئلہ پر ان ( سشما ) کا بیان تک سننے کو تیار نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ ایوان میں بیان دینے کے موقع کا انتظارکر رہی تھیں جب سے پارلیمنٹ کا مانسون سشن سشروع ہوا تھا ۔ انہوں نے واضح کیا کہ ان کے خلاف الزامات بے بنیاد اور غیر درست ہیں اور ان کے تعلق سے گمراہ کن پروپگنڈہ کیا جا رہا ہے ۔ سشما سوراج نے جب بیان دیا ایوان میں اپوزیشن کی صفیں تقریبا خالی تھیں جبکہ کانگریس کے ارکان کو معطل کیا گیا ہے

ور دوسری اپوزیشن جماعتیں کانگریس کے ساتھ ایوان کا بائیکاٹ کر رہی ہیں۔ سشما سوراج کے بیان کے وقت برسر اقتدار جماعتوں کے ارکان بنچس تھپتھپا رہے تھے ۔ سشما سوراج نے کہا کہ ان پر الزامات عائد کرنے والوں کو وہ چینلج کرتی ہیں کہ ان کے خلاف کوئی ایک بھی دستاویز پیش کرے یا ایک چٹھی یا ایک ای میل پیش کرے ۔ سشما سوراج نے کہا کہ انہوں نے صرف حکومت برطانیہ سے کہا تھا کہ اگر برطانیہ للت مودی کو سفری دستاویزات جاری کرتا ہے تو اس سے باہمی تعلقات متاثر نہیںہونگے ۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ للت مودی کی اہلیہ کی زندگی خطرہ میں تھی اور علاج ضروری تھا ایسے وقت میں انہیں ان کے شوہر کے ساتھ رہنے کی ضرورت تھی ۔ انہوں نے سوال کیا کہ وہ سونیا گاندھی سے پوچھنا چاہتی ہیں کہ اگر اس صورتحال میں وہ ہوتیں تو کیا کرتیں ۔ کیا وہ ایک متاثرہ خاتون کو مرنے کیلئے چھوڑدیتیں ؟ ۔ انہوں نے کہا کہ اگر اس طرح کی مریضہ کی مدد کرنا جرم ہے تو وہ ایوان میں قبول کرتی ہیں کہ انہوںنے جرم کیا ہے اور ایوان ان کو سزا دینے کوئی فیصلہ کرے۔ وزیرخارجہ نے کہا کہ وہ چیلنج کرتی ہیں کہ ان کے خلاف الزامات عائد کرنے والے کوئی ایک بھی دستاویزی ثبوت پیش کرے ۔ چاہے یہ معمولی چٹھی ہو یا ای میل ہو۔

TOPPOPULARRECENT