Thursday , March 30 2017
Home / Top Stories / نئے سال کی رات بنگلور میں مبینہ چھیڑچھاڑ کا واقعہ

نئے سال کی رات بنگلور میں مبینہ چھیڑچھاڑ کا واقعہ

بنگلور: پیر کے روزپولیس کے ایک اعلی عہدیدار نے بتایا کہ نئے سال کی شب پارٹی کے دوران سٹی سنٹر میں خواتین سے چھیڑ چھاڑ اور نازیبا سلوک کے واقعہ میں ملوث بدمعاشوں کی نشاندہی کے لئے سی سی ٹی کیمرے کے تصوئیروں کی چھان بین کررہی ہے۔

اے ائی این ایس سے بات کرتے ہوئے ایڈیشنل کمشنر شالینی کرشنا مورتی نے بتایا کہ ’’ اگرچہ کہ کوئی شکایت ہمیں موصول نہیں ہوئی ہے ‘ پھر بھی ہم ایم جی روڈ اور برگیڈروڈ اور اس کے اطراف واکناف کے فوٹیج کی چھان بین کررہے ہیں کیونکہ اگر اس قسم کا کوئی واقعہ رونماء ہوا ہے تو ہم خاطیوں کو پکڑسکیں‘‘۔

نئے سال کی پارٹی کے دوران چند ایک شرابی لڑکوں کی جانب سے خواتین کے ساتھ مبینہ چھیڑ چھاڑ کے دعوؤں او رجوابی دعوؤں کے درمیان ‘ کرشنا مورتی نے کہاکہ پولیس خاطیوں کے خلاف سخت کاروائی کریگی اگر کوئی ثبوت اگر وہ موبائیل فوٹیج کی شکل میں ہو یا تحریری شکایت میں متاثرین یا پھر عینی شاہد کی جانب سے فراہم کیاجائے ‘ ہم خاطیوں کے خلاف ضرور کاروائی کریں گے‘‘۔

انہوں نے کہاکہ ’’ ہمیں یہ دعویٰ کے ساتھ نہیں کہہ سکتے ہیں اس قسم کا واقعہ وہاں پیش آیا ہے کیونکہ نیوز چیانل کی جانب سے دیکھئے جانے والے ویڈیوبھی اس واقعہ کی تصدیق نہیں کررہے ہیں‘ ہم عوام سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس سلسلے میں آگے ائیں اور ہمیں ثبوت فراہم کرکے تاکہ از خود کاروائی کی جاسکے۔

ابتدائی طور پر مختلف پولیس عہدیداروں سے اس ضمن میں پوچھ تاچھ کی گئی جو اس وقت ڈیوٹی پر متعین تھے ‘ باوجود اسکے مبینہ چھیڑ چھاڑ کے واقعہ کی تصدیق نہیں ہوئی‘ مگر یہ معلوم ہوا کہ سال نو کے جشن پرامن انداز میں گذر جانے کے بعد بیراکیٹس توڑ کر بھاگنے والوں پر پولیس نے لاٹھی چارج ضرور کیاہے۔

کرشنا مورتی نے مزیدکہاکہ ’’ جب تک ہمیں کوئی فوٹیج نہیں ملتا جس میں مبینہ چھیڑ چھاڑ کے ثبوت ہوں ‘ یا پھر کوئی شکایت موصول نہیں ہوتی تب تک ہم کس طرح خاطیوں کے خلا ف کاروائی کرسکتے ہیں‘‘۔کرشنا مورتی نے کہاکہ ہم نے وہاں پر موثر حفاظتی انتظامات کئے تھے

۔ انہو ں نے مزیدکہاکہ سی سی ٹی وی کمیروں کے علاوہ سادہ لباس میں بھی پولیس متعین کی گئی تھی تاکہ کسی ناگہانی واقعہ کی روک تھام کی جاسکے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT