Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / نئے سکریٹریٹ کے خلاف تلنگانہ یوتھ کانگریس قائدین کا احتجاج

نئے سکریٹریٹ کے خلاف تلنگانہ یوتھ کانگریس قائدین کا احتجاج

کے سی آر توہم پرستی کا شکار ، کانگریس یوتھ قائدین گرفتار
حیدرآباد ۔ 15 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : صدر تلنگانہ کانگریس کمیٹی انیل کمار یادو نے نئے سکریٹریٹ کی تعمیر کے خلاف یوتھ کانگریس قائدین کے ساتھ احتجاجی دھرنا منظم کیا ۔ پولیس نے احتجاجی قائدین کو گرفتار کرتے ہوئے بلارم پولیس اسٹیشن منتقل کردیا ۔ سابق مرکزی وزیر سروے ستیہ نارائنا نے پولیس اسٹیشن پہونچکر گرفتارر یوتھ کانگریس قائدین سے ملاقات کی ۔ یوتھ کانگریس کمیٹی انیل کمار نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ سکریٹریٹ متحدہ آندھرا پردیش کے لیے کارآمد ثابت ہوسکتا ہے تو تلنگانہ کے لیے کیوں کام میں نہیں آسکتا ۔ کے سی آر پہلے چیف منسٹر ہے جو توہم پرستی کا شکار ہے اور اپنی اسی توہم پرستی کی خاطر سکندرآباد کے بیسن پولو گراونڈ پر 300 کروڑ روپئے خرچ کرتے ہوئے نیا سکریٹریٹ تعمیر کرنا چاہتے ہیں ۔ محکمہ دفاع سے بیسن پولو گراونڈ حاصل کرنے کے لیے 90 کروڑ روپئے نقد رقم دینے کے ساتھ مزید 600 تا 700 ایکڑ متبادل اراضی فراہم کرنے کا تلنگانہ حکومت نے مرکز کو پیشکش کیا ہے ۔ تلنگانہ کے سی آر کی جاگیر نہیں ہے اور نہ ہی وہ عوامی فنڈز کا بیجا استعمال کرنے کے مجاز ہیں ۔ ٹی آر ایس نے عوام کو ڈبل بیڈ روم مکانات تعمیر کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ اس وعدے کو پورا کرنے میں حکومت پوری طرح ناکام ہوگئی ہے ۔ نیا سکریٹریٹ تعمیر کرنے پر حکومت تقریبا 400 کروڑ بشمول 90 کروڑ روپئے ادائیگی کے ساتھ یہی 400 کروڑ روپئے سے متبادل کے طور پر دی جانے والی اراضی پر ہزاروں غریب عوام کیلئے ڈبل بیڈ روم مکانات تعمیر کیے جاسکتے ہیں ۔ چیف منسٹر تلنگانہ عوامی ترقی اور فلاح و بہبود کو نظر انداز کرتے ہوئے شاہی زندگی گذارنے کے عادی بن گئے ہیں اور اپنی قیام گاہ کو مکمل بلڈ پروف بناتے ہوئے اس پر 300 کروڑ روپئے خرچ کرچکے ہیں جس کی یوتھ کانگریس کمیٹی سخت مذمت کرتی ہے ۔ نئے سکریٹریٹ کی تعمیر کے خلاف یوتھ کانگریس اپنے احتجاج کو جاری رکھے گی ۔۔

TOPPOPULARRECENT