Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / ناگر کرنول میں قیمتی وقف اراضی کا تحفظ ، ناجائز استعمال پر روک

ناگر کرنول میں قیمتی وقف اراضی کا تحفظ ، ناجائز استعمال پر روک

چیف ایگزیکٹیو آفیسر وقف بورڈ محمد اسد اللہ کا دورہ ، دھاندلیوں کی نشاندہی
حیدرآباد ۔ 9۔ ڈسمبر (سیاست نیوز) وقف بورڈ کے چیف اگزیکیٹیو آفیسر محمد اسد اللہ نے ناگرکرنول ضلع محبوب نگر میں قیمتی اوقافی اراضی کے تحفظ اور ناجائز استعمال کو روکنے میں کامیابی حاصل کی۔ انہوں نے ناگر کرنول کا دورہ کرتے ہوئے اوقافی اراضی پر تعمیر کردہ کامپلکس کی ملگیات اور ان کے کرایہ جات کے بارے میں معلومات حاصل کیں۔ جانچ کے دوران پتہ چلا کہ غیر مجاز طریقہ سے ملگیات کو سب لیز پر دیا گیا ہے جس سے وقف بورڈ کو ماہانہ کرایوں میں بھاری نقصان ہورہا ہے ۔ ناگر کرنول کے مرکزی مقام پر مسجد اور قبرستان کے تحت 16 ایکر اراضی موجود ہے اور ایک حصہ میں دو منزلہ عمارت تعمیر کی گئی جس میں جملہ 155 ملگیاں ہیں۔ گراؤنڈ فلور پر 99 اور فرسٹ فلور پر 56 ملگیات ہیں۔ سابق میں کمیٹی کی جانب سے کرایہ کی وصولی میں مبینہ بے قاعدگیوں کی شکایات پر وقف بورڈ نے کمیٹی کو برخواست کردیا تھا اور نئی کمیٹی تشکیل دی گئی ۔ تحقیقات کے دوران پتہ چلا کہ موجودہ کمیٹی نے بھی کرایہ داروں سے زائد کرایہ وصول کرتے ہوئے وقف بورڈ کو کم رقم ادا کی ہے اور یہ سلسلہ تقریباً ایک سال سے جاری ہے۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ نے بتایا کہ ملگیات کو سب لیز پر دے کر فرسٹ فلور پر ماہانہ 3 تا 4 ہزار روپئے کرایہ وصول کیا جارہا ہے جبکہ وقف بورڈ کو صرف 500 روپئے ادا کئے جارہے ہیں۔ اسی طرح گراؤنڈ فلور پر 6 تا 7 ہزار روپئے کرایہ حاصل کرتے ہوئے وقف بورڈ کو 1150 روپئے ادا کئے جارہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ موجودہ کمیٹی 2014 ء سے کام کر رہی ہے، تاہم مقامی افراد کی شکایت پر انہوں نے شخصی طور پر معائنہ کرتے ہوئے بے قاعدگیوں کا پتہ چلایا۔ انہوں نے کہا کہ کرایہ داروں اور کمیٹی کی ملی بھگت کے باعث یہ سرگرمیاں جاری ہیں۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر نے موجودہ کمیٹی کو برخواست کرتے ہوئے کامپلکس راست طور پر وقف بورڈ کی تحویل میں لینے کی سفارش کی ہے۔ وہ اس سلسلہ میں وقف بورڈ کے عہدیدار مجاز کو رپورٹ پیش کر رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ محبوب نگر کی طرح اور بھی کئی اضلاع میں بے قاعدگیوں کی شکایات موصول ہوئی ہیں جن کی جانچ کی جارہی ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT