Sunday , September 24 2017
Home / شہر کی خبریں / ناگم جناردھن ریڈی کو بی جے پی میں مستحکم مقام نہ ملنے پر بوکھلاہٹ کا شکار

ناگم جناردھن ریڈی کو بی جے پی میں مستحکم مقام نہ ملنے پر بوکھلاہٹ کا شکار

تلنگانہ بچاؤ تحریک شروع کرنے کے اعلان پر بی جے پی قائد پر جی بالراجو ٹی آر ایس رکن اسمبلی کی تنقید
حیدرآباد ۔ 26 ۔ اگست (سیاست  نیوز) ٹی آر ایس کے رکن اسمبلی جی بالراجو نے بی جے پی قائد ناگم جناردھن ریڈی کی جانب سے تلنگانہ بچاؤ تحریک کے آغاز پر سخت تنقید کی۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے بالراجو نے کہا کہ بی جے پی میں شمولیت کے بعد کوئی مستحقہ مقام حاصل کرنے میں ناکامی کے بعد ناگم جناردھن ریڈی بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکے ہیں اور وہ اس طرح کی تحریک کے ذریعہ عوامی تائید حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سیاسی بقاء کیلئے ٹی آر ایس حکومت کو تنقید کا نشانہ بنانا افسوسناک ہے۔ تلنگانہ عوام ٹی آر ایس حکومت کی کارکردگی سے مطمئن ہے اور چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے جن فلاحی اور ترقیاتی اسکیمات کا آغاز کیا ہے ، اس کے مثبت نتائج برآمد ہورہے ہیں۔ ٹی آر ایس رکن اسمبلی نے کہا کہ دیہی سطح پر بنیادی سہولتوں کی فراہمی کیلئے جس پروگرام کا آغاز کیا گیا ، اس سے عوام کافی خوش ہیں۔ گرام جیوتی پروگرام کے تحت وزراء اور عوامی نمائندے مواضعات کی سطح پر عوامی مسائل کا جائزہ لے رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ چیف منسٹر خود بھی مختلف اضلاع کا دورہ کرتے ہوئے دیہی علاقوں میں بنیادی سہولتوںکی فراہمی میں خصوصی دلچسپی کا اظہارکر رہے ہیں۔

اس اسکیم کے تحت کئی ہزار کروڑ روپئے کے ترقیاتی کاموں کو منظوری دی گئی۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ 4 برسوں میں تلنگانہ کے دیہی علاقے بنیادی سہولتوں سے آراستہ ہوجائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ناگم جناردھن ریڈی اپنی سیاسی بقاء اور محبوب نگر میں دوبارہ عوامی تائید کے حصول کیلئے حکومت کے خلاف مہم چلا رہے ہیں۔ انہوں نے جناردھن ریڈی کے ان الزامات کو مسترد کردیا کہ ٹی آر ایس حکومت تلنگانہ ریاست کے حصول کے مقاصد کی تکمیل میں ناکام ہوچکی ہے۔ بالراجو نے کہا کہ ناگم جناردھن ریڈی جب تلگو دیشم حکومت میں وزیر تھے، انہوں نے محبوب نگر ضلع کی ترقی پر کوئی توجہ نہیں کی۔ محبوب نگر ضلع انتہائی پسماندہ ہے اور پسماندگی کے سبب لاکھوں افراد نے نقل مقام کرلیا ۔ انہوں نے سوال کیا کہ ناگم جناردھن ریڈی نے محبوب نگر میں آبپاشی پراجکٹس کی تکمیل میں کس حد تک دلچسپی لی ہے اور ان کے دور میں ضلع کی ترقی کیلئے کتنے فنڈس جاری کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ جناردھن ریڈی کی مہم کا محبوب نگر کے عوام پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور ضلع میں ٹی آر ایس کی مقبولیت برقرار رہے گی۔

TOPPOPULARRECENT