Thursday , October 19 2017
Home / مذہبی صفحہ / نجاست کے مسائل

نجاست کے مسائل

مرسل : ابوزہیر نظامی

نجاست دو طرح پر ہے
(۱) نجاست  غلیظہ  (۲) نجاست  خفیفہ ۔
۱۔  پاخانہ ‘ پیشاب ‘ منی ‘ لید ‘ گوبر ‘ مینگنیاں ‘ بط اور مرغی کا گو ‘ بہتا خون ‘ بہتا پیپ ‘ منہ بھر قئے ‘ شراب ‘ سیندھی ‘ تاڑی ‘ مردار چربی وغیرہ چیزیں نجاست غلیظہ ہیں ۔
۲ ۔گھوڑے اور حلال چوپایوں کا پیشاب اور حرام پرندوں کی بیٹ نجاست خفیفہ ہے ۔
۳ ۔ نجاست غلیظہ اگر پتلی ہو تو ہتھیلی کے گڑھے برابر اور گاڑھی اور بستہ ہو تو ساڑھے  چار ماشہ وزن تک معاف ہے اس سے زیادہ ہو تو دور کرنا فرض ہے ۔
۴ ۔ نجاست خفیفہ جسم یا کپڑے کے کسی حصہ مثلاً ہاتھ پاؤں ‘ یا آستیں ‘ کلی وغیرہ پر لگ جائے تو  اس کی چوتھائی تک معاف ہے۔ اس سے زیادہ ہو تو دور کرنا فرض ہے ۔
(تنبیہ) یہ احکام صرف کپڑے یا جسم سے مخصوص ہیں۔ اگر تھوڑے پانی یا کنویں میں ایک قطرہ یا ذرہ برابر بھی نجاست گر جائے تو سارا پانی ناپاک ہوجائے گا ۔
۵ ۔  اگر کسی کپڑے پر نظر نہ آنے والی نجاست لگ جائے تو تین مرتبہ دھونے اور ہر مرتبہ پوری قوت کے ساتھ نچوڑنے پر کپڑا پاک ہوجائے گا  اور اگر نظر آنے والی نجاست  لگے تو صرف نجاست دور ہونے تک دھونا لازم ہے اگرچہ دھبہ یا بو باقی رہ جائے (یعنی عین نجاست اور اس کا قابل زوال اثردور ہوجانا کافی ہے ) ۔
۶ ۔ اگر کسی برتن میں کتا منہ ڈالے یا چاٹ لے تو اس کو تین دفعہ دھونے اور ہر دفعہ خشک کرنے سے پاک ہوجائے گا لیکن سات بار دھونا بہتر ہے اور ایک بار اسی سات بار میں مٹی سے دھونا چاہئے ۔
{نصاب اہل خدمات شرعیہ حصہ دوم}
[email protected]

TOPPOPULARRECENT