Wednesday , August 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / نرمل میں مسافرین کیلئے سحر کا مفت و معقول انتظام

نرمل میں مسافرین کیلئے سحر کا مفت و معقول انتظام

انسانیت کی تڑپ رکھنے والے چند نوجوانوں کا مثالی اور مستحسن اقدام
نرمل۔/15جون، ( جلیل ازہر کی رپورٹ ) آج کے اس پرآشوب دور میں جہاں لوگ دوسرے کے کاندھوں کو اپنی بلندی کے لئے استعمال کررہے ہیں ایسے ماحول میں خدا کے کچھ بندے ایسے بھی ہیں جن کی خدمات کو قلمبند کرنا ضروری ہوگا۔ مستقر نرمل کے قدیم بس اسٹانڈ پر سنگم ہوٹل ہے جو قومی شاہراہ پر واقع ہے، حیدرآباد اور ناگپور کو رات میں کوئی بیس سے زائد بسیں چلتی ہیں چونکہ نرمل سے ناگپور اور حیدرآباد سے نرمل کا فاصلہ قریب ہونے کی وجہ سے دونوں مقامات کی بسوں کا وقت نرمل پہونچنے تک سحری کا وقت ہوتا ہے جس میں کئی مسلم حضرات اور خواتین موجود رہتے ہیں، نرمل کے نوجوانوں کا ایک گروپ ہر سال پابندی سے آپسی تعاون کے ذریعہ باضابطہ رات بھر جاگتے ہوئے ان مسافروں کے لئے سحر کے وقت جو انتظامات کرتے ہیں اس کی کوئی مثال نہیں دے سکتا۔ ان کے اس جذبہ کو دیکھ کر حیرت ہوتی ہے کہ ماہ رمضان المبارک کے اس مقدس ماہ میں اپنے بیوی بچوں کے ساتھ گھر پر سحر کرتے ہوئے مسافرین کے لئے جو خدمت کرتے ہیں ان نوجوانوں کی جتنی بھی ستائش کی جائے کم ہے ، خواتین کے لئے علحدہ انتظام بھی کیا جاتا ہے۔ ان خدمات کے پس پردہ کسی کی کوئی غرض شامل نہیں ہے بے لوث خدمت کے جذبہ کے تحت یہ کام کوئی دس سال سے انجام دیا جارہا ہے۔ ان نوجوانوں کی خواہش پر آج راقم الحروف نے بھی صبح کی اولین ساعتوں میں حالات کا جائزہ لیا اور سحری بھی ان مسافرین کے ساتھ کی۔ مسافرین کو نوجوان جس حسن سلوک سے سحری کروارہے تھے اس منظر کو بھولا نہیں جاسکتا ۔ بتایا جاتا ہے کہ کئی مسافرین نے اس کام سے بے حد متاثر ہوکر عطیات کا پیشکش کیا لیکن ان نوجوانوں نے مسترد کرتے ہوئے صرف دعاؤں کی گذارش کی۔ دلچسپ بات یہ یہ کہ نمائندہ سیاست جلیل ازہر سے بھی خواہش کی کہ وہ ہماری خدمات کی مثال قلمبند کرلیں لیکن نام اخبار میں نہ دیں کیونکہ ہم صرف اللہ کی رضا اور مسافرین کی سہولت کیلئے کام کررہے ہیں نام نمود کیلئے نہیں۔ واضح رہے کہ سرمایہ داروں کی سماج میں کمی نہیں لیکن انسانیت کی تڑپ رکھنے والوں کے سبب ہی اس دنیا کا نظام چل رہا ہے۔ اسی لئے کہا جاتا ہے کہ دن کی روشنی میں رزق تلاش کرو اور رات کو رزق دینے والے کو تلاش کرو۔ ان نوجوانوں کی اس تڑپ کا پھل قدرت ضرور دے گی کیونکہ اپنے لئے تو کوئی بھی جیتا ہے دوسروں کیلئے ان کی یہ تڑپ ایک مثال ہے جس کی ہر کوئی ستائش کررہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT